Book Name:Khush Naseebi ki Kirnain

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

      دُرُود شریف کی فضیلت

       شیخِ طریقت، امیرِاہلسنّت، بانی ٔدعوت ِاسلامی حضرت علامہ مولاناابوبلال محمد الیاس عطّارقادِری رَضَوی ضیائی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ     اپنے رسالے’’مسجدیں خوشبودار رکھئے‘‘ میں حدیثِ پاک نقل فرماتے ہیں کہ رسولِ اکرم، نورمُجَسَّم، شاہِ بنی آدم، نبیِّ مُحتَشَم، شافِعِ اُمَمصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا ارشادِرحمت بنیادہے : ’’جومجھ پر میرے حق کی تعظیم کے لیے دُرُودِپاک بھیجے، اللّٰہ  تَعَالٰی اس دُرودِپاک سے ایک فرشتہ پیدافرماتاہے جس کاایک بازومشرق میں ایک مغرب میں ، اللّٰہ  تَعَالٰی  اسے حکم فرماتاہے : صَلِّ عَلٰی عَبْدِی!کَمَاصَلّٰی عَلٰی نَبِیِّی، یعنی : دُرُودبھیج میرے اس بندے پرجیسے اس نے دُرُود بھیجا میرے نبی صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  پر۔وہ فرشتہ قیامت تک اس پردُرُود بھیجتا رہتاہے۔‘‘(القَوْلُ البَدِیْع، ص۲۵۱، مؤسسۃالریان)

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!  صَلَّی اللّٰہُ تَعالٰی علٰی مُحَمَّد

       میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! اللہ  عَزَّوَجَلَّ خالقِ کائنات ہے۔اس نے مختلف اشیاء کوپیدافرمایااوران میں سے بعض کوبعض ٍپرفضیلت دی۔مثلاًبعض انبیاء کو بعض انبیاء پر، بعض ملائکہ کوبعض ملائکہ پر، بعض صحابہ کودیگرصحابہ پر، بعض اولیاء کوبعض اولیاء پر ، بعض مقامات کوبعض مقامات پراوربعض ایام کوبعض ایام پرفضیلت دی ۔اسی طرح اللہ تبَارَک و تَعَالٰی نے بعض راتوں کوبھی بعض راتوں پرفضیلت بخشی ہے۔ مثلاً شبِ قدر، شبِ برأت، شبِمعراج، شبِ جمعۃُالمبارک، شبِ عاشورہ، ربیع النُّور شریف کی بارہویں رات، عیدالفطرکی رات اوررجب کی پہلی اورستائیسویں رات۔ ان مقدّس راتوں میں سے کچھ کے متعلق وارد فضائل ملاحظہ فرمائیے۔

شبِ قدرکی فضیلت

        دعوتِ اسلامی کے اشاعتی اِدارے’’مکتبۃُ المدینہ‘‘کی مطبوعہ 1548 صفحات پر مشتمل کتاب’’فیضانِ سنّت(جلداَوّل)‘‘کے صفحہ 1136 پر امیرِاہلسنّت، بانی ٔدعوتِ اسلامی حضرت علامہ مولاناابو بلال محمدالیاس عطّار قادِری رَضَوی ضیائی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ    حدیثِ پاک نقل فرماتے ہیں کہ حضرت سیِدُناانس بن مالک رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے ہیں : ایک بارجب ماہِ رَمَضانُ المبارک تشریف لایاتوسلطانِ دوجہان   مدینے کے سلطان، رَحمت عالمیان، سرورِذیشانصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا :  ’’تمہارے پا س ایک مہینہ آیاہے جس میں ایک رات ایسی بھی ہے جو ہزار مہینوں سے افضل ہے۔ جو شخص اس رات سے محروم رہ گیا، گویاتمام کی تمام بھلائی سے محروم رہ گیا اور اس کی بھلائی سے محروم نہیں رہتامگروہ شخص جوحقیقۃًمحروم ہے۔‘‘

(سنن اِبْنِ ماجَہ ، ج۲، ص۲۹۸، الحدیث۱۶۴۴دارالکتب العلمیہ بیروت)

شب برأ ت کی فضیلت

        اسی کتاب کے صفحہ1381پرحدیث پاک نقل فرماتے ہیں کہ اُمُّ الْمُؤمِنِیْنحضرتِ سَیِّدَتُنَاعائشہ صدیقہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا سے روایت ہے، تاجدارِ رِسالت، سراپا رَحْمت، محبوبِ ربُّ العزت صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا :

 ’’ اللہ عَزَّوَجَلَّ  شعبان کی پندرہویں شب میں تجلی فرماتاہے۔اِستغفار(یعنی توبہ)کرنے والوں کو بخش دیتااور طالبِ رَحمت پررحم فرماتااورعداوت والوں کوجس حال پرہیں اسی حال پر چھوڑ دیتا ہے‘‘۔

(شُعب اِلایْمان ج۳، ص۳۸۲، الحدیث۳۸۳۵دارالکتب العلمیہ بیروت)                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                           

شبِ معراج کی فضیلت

        اورصفحہ1368پرحدیث پاک نقل فرماتے ہیں کہ حضرت سیِّدناسَلمان فارسی رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ سے مروی ہے کہ اللّٰہکے مَحبوب دانائے غُیُوب، مُنَزَّہٌ عَنِ الْعُیُوب صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کافرمانِ ذیشان ہے : ’’رجب میں ایک دن اور رات ہے۔جواس دن کاروزہ رکھے اوررات کوقیام(عبادت)کرے تو گویا اس نے سو سال کے روزے رکھے اوریہ رجب کی ستائیس تاریخ ہے۔اسی دن محمدصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو اللہ    عَزَّوَجَلَّ نے مبعوث فرمایا۔‘‘(شُعب الِایْمان ج۳، ص۳۷۴، الحدیث۳۸۱۱دارالکتب العلمیہ بیروت)

        آہ!دین سے دُوری کے سبب آج مسلمانوں کی اکثریت ان متبرک، مقدّس وعظیم الشان راتوں کوبھی عام راتوں کی طرح غفلت کی نذرکر دیتی ہے۔ان کو  خبر تک نہیں ہوتی کہ ہم کتنی بابرکت رات کی بَرَکتوں سے محروم رہ گئے۔اَلْحَمْدُلِلّٰہ  عَزَّوَجَلَّ تبلیغِقراٰن وسنّت کی عالمگیرغیرسیاسی تحریک دعوت ِاسلامی کامَدَنی ماحول ہر معاملہ میں ہماری رہنمائی کرتاہے۔اسی طرح دعوتِ اسلامی کاپاکیزہ مَدَنی ماحول ان مقدّس راتوں کواحسن طریقے سے بسرکرنے میں بھی ہماری خوب رہنمائی کرتاہے۔ اَلْحَمْدُلِلّٰہ عَزَّوَجَلَّ دعوتِ اسلامی کے تحت ان مقدس راتوں کوعبادت میں گزارنے کے لیے متعددشہروں میں اجتماعات کاسلسلہ ہوتاہے، مثلاًاجتماعِ میلاد، اجتماع شبِ معراج، اجتماع شبِ برأ ت، اِجتماعِ شبِ قدراوربڑی گیارہویں شریف کے سلسلے میں اجتماعِ ذکرونعت۔ان بابَرَکت اجتماعات میں ہزاروں اسلامی بھائی شرکت کرتے اوررحمتوں سے اپنی خالی جھولیاں بھرتے ہیں ۔اس موقع پرمتعددمَدَنی بہاریں بھی وقوع پذیر ہوتی ہیں ، مثلاًگناہوں سے نجات کی سعادت، نیکیاں  کرنے کا جذبہ، توبہ کرنے کی سعادت، مقدس مقامات کی زیارت، دورانِ اجتماع غنودگی میں سرکارصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی زیارت، مَدَنی ماحول سے وابستگی اورجسمانی اَمراض سے نجات وغیرہ۔اسی قسمکی مَدَنی بہاروں پر مشتمل رسالہ بنام ’’خوش نصیبی کی کرنیں ‘‘اور دیگر11مَدَنی بہاریں دعوتِ اسلامی کی مجلس اَلْمَدِیْنَۃُالْعِلْمِیَّہمکتبۃالمدینہ کے تعاون سے پیش کرنے کی سعادت حاصل کر رہی ہے۔ان بہاروں کا خود بھی مطالعہ کیجئے اوران مبارک اجتماعات کی اَہمیت اُجاگر کرنے کے لئے دوسرے اسلامی بھائیوں کوبھی اس کی ترغیب دلایئے۔

اللہ تَعَالٰی ہمیں ’’اپنی اورساری دنیاکے لوگوں کی اِصلاح کی کوشش‘‘ کرنے کے لئے مَدَنی انعامات پرعمل ، مَدَنی قافلوں کامسافربنتے رہنے کی توفیق عطا فرمائے اور دعوتِ اسلامی کی تمام مجالس بشمول مجلس اَلْمَدِیْنَۃُالْعِلْمِیَّہ کو دن پچیسویں رات چھبیسویں ترقی عطافرمائے ۔اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

 



Total Pages: 7

Go To