Book Name:163 Madani Phool

ہی سانس میں مت پیو، بلکہ دو یا تین مرتبہ (سانس لے کر) پیو اور پینے سے قبل بِسْمِ اﷲ پڑھو اور فراغت پر اَلْحَمْدُلِلّٰہ کہا کرو( تِرمِذی ج۳ ص۳۵۲ حدیث ۱۸۹۲)خ نبیِّ اکرم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمنے برتن میں سانس لینے یا اس میں پھونکنے سے منع فرمایاہے ۔ ( ابوداوٗد ج۳ص ۴۷۴ حدیث۳۷۲۸ )مُفَسّرِشہیر حکیمُ الْاُمَّت  حضر  ت ِ مفتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُاللہِ  الحَنّاناس حدیثِ پاک کے تحت فرماتے ہیں : برتن میں سانس لینا جانوروں کا کام ہے نیزسانس کبھی زہریلی ہوتی ہے اِس لیے برتن سے الگ منہ کر کے سانس لو ، (یعنی سانس لیتے وقت گلاس منہ سے ہٹا لو)گرم دودھ یا چائے کو پھونکوں سے ٹھنڈا نہ کرو بلکہ کچھ ٹھہرو ، قدرے ٹھنڈی ہو جائے پھر پیو۔(مراٰۃ ج۶ ص ۷۷ )البتّہ درودِ پاک وغیرہ پڑھ کر بہ نیّتِ شفا پانی پر دم کرنے میں حَرَج نہیں خ  پینے سے پہلے بِسْمِ اللہ پڑھ لیجئے خ چوس کرچھوٹے چھوٹے گُھونٹ پئیں ، بڑے بڑے گُھونٹ پینے سے جِگر کی بیماری پیدا ہوتی ہے خپانی تین سانس میں پئیں خبیٹھ کر اورسیدھے ہاتھ سے پانی نوش کیجئے خ لَوٹے وغیرہ سے وُضو کیا ہو تو اُس کا بچا ہوا پانی پینا 70 مرض سے شِفا ہے کہ یہ آبِ زم زم شریف کی مُشابَہَت رکھتا ہے، ان دو (یعنی وُضو کا بچا ہوا پانی اورزم زم شریف ) کے عِلاوہ کوئی سابھی پانی کھڑے کھڑے پینا مکروہ ہے۔(ماخوذاز:فتاوی رضویہ ج۴ص۵۷۵ ج ۲۱ص ۶۶۹ )یہ دونوں پا نی  قبلہ رُو ہو کر کھڑے کھڑے پئیں خپینے سے پہلے دیکھ لیجئے کہ پینے کی شے میں کوئی نقصان دہ چیز وغیرہ تو نہیں ہے( اِتحافُ السّادَۃ للزّبیدیج ۵ ص ۵۹۴)خپی چکنے کے بعد

 



Total Pages: 40

Go To