Book Name:Aarzoo e Deedar e Madina

ہوئی جاتی ہے اُوجَڑ اب مِری اُمّید کی کھیتی

بھرَن برسا دو رحمت کی خدارا یاشہِ بغداد

 

کرم میراں !مِرے اُجڑے گلستاں میں بہارآئے

خَزاں کا رُخ پِھرا دو اب خدارا یاشہِ بغداد

 

شہا! خیرات لینے کو سَلاطینِ زمانہ نے

تِرے دربار میں دامن پَسارا یاشہِ بغداد

 

گرجتے بادَلوں کا شور چلتی آندھیوں کا زور

لرزتا ہے کلیجہ دو سہارا یاشہِ بغداد

 

بچالو دشمنوں کے وار سے یا غوث جِیلانی

بڑی اُمّید سے تم کو پکارا یاشہِ بغداد

 

خدا سے بخشوا دو بے حساب بہرِ علی حیدر

کرم کر دو کرم کر دو خدارا یاشہِ بغداد

 

اگرچِہ لاکھ پاپی ہے مگر عطارؔ کس کا ہے !

تمہارا ہے تمہارا ہے تمہارا یاشہِ بغداد



Total Pages: 10

Go To