Book Name:Ilm O Hikmat Kay 125 Madani Phool

کی مطبوعہ505صفحات کی کتاب ’’غیبت کی تباہ کاریاں ‘‘ صفحہ465تا468  پر دیکھی جا سکتی ہیں ۔اس واقعہ کے بعد کسی مَحرَمہ نے مفتیٔ دعوتِ اسلامی قدس سرہ السامی کی خواب میں  زیارت کی تو پوچھا : آپ کو یہ رُتبہ کیسے ملا؟مرحوم خاموش رہے، بالآخر اصرار کرنے پر فرمایا(زبان پر) قفلِ مدینہ لگانے کی وجہ سے۔مرحوم واقعی نہایت سنجیدہ اور کم گو تھے، ہم سبھی کے لئے اس واقعہ میں  ’’خاموشی‘‘ کی ترغیب ہے۔

اللہ مجھے کر دے عطا قُفلِ مدینہ

آنکھوں  کا زَباں  کا لوں  لگا قفلِ مدینہ

کامل حج کا ثواب

(102)دعوتِ اسلامی کے مَدَنی کاموں  میں  بڑھ چڑھ کر حصّہ لیں  گے، خوب انفِرادی کوشِش کریں  گے، مَدَنی اِنعامات اور مَدَنی قافِلوں  کے مسافِر بنیں گے، باعمل مبلِّغ بن جائیں  گے، مساجِد وغیرہ میں  فیضانِ سنّت کا درس دیں  گے تو اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ       دل خوب کُھل جائے گااور دنیا کی بڑی سے بڑی شخصیت سے مرعوب نہیں  ہوں گے۔ سنّتیں  سیکھنے سکھانے کی فضیلت بھی خوب ہے چُنانچِہ رحمتِ دو جہانصلّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلّم کا فرمانِ عالی شان ہے :  ’’جو صبح کو مسجد کی طرف بھلائی سیکھنے یا سکھانے کے ارادے سے چلے گا اسے کامل حج کرنے والے کا ثواب ملے گا ۔‘‘ (طبرانی کبیر ، رقم ۷۴۷۳ ، ج ۸، ص ۹۴ )

برکتیں  تمہارے بُزُرگوں  کے ساتھ ہیں

(103) اعلیٰ حضرت  امام اَحمد رضا خانعلیہ رحمۃُ الرَّحمٰن  جو کہ ولیُّ اللہ، سچّے عاشقِ رسول اور ہمارے مُسلَّمہ بُزُرگ ہیں ، ان کی عقیدت کودل کی گہرائی کے اندر سنبھال کر رکھنابے حد ضَروری ہے۔اللہ کے پیارے حبیب   صلّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلّمکافرمانِ بَرَکت نشان ہے :  اَلبَرَ کَۃُ مَع اَکابِرِ کُم یعنی برکت تمہارے بُزُرگوں  کے ساتھ ہے۔(المستدرک للحاکم، کتاب الایمان، ج۱، ص۲۳۸، الحدیث۲۱۸)       

اعلیٰ حضرت سے اِختِلاف کا سوچئے بھی مت

(104) آپ میں  سے اگر کسی کامیرے آقااعلیٰ حضرت علیہ رحمۃُ ربِّ العزّت سے اختِلاف کا معمولی سا بھی ذِہن بننا شروع ہو جائے تو سمجھ لیجئے کہ مَعَاذَ اللہ عَزَّوَجَلَّ آپکی بربادی کے دن شُروع ہو گئے ! لہٰذا فوراً چوکنّے ہو جایئے اور اختِلاف کے خیال کو حرفِ غَلَط کی طرح دِماغ سے مٹا دیجئے ۔

عقل کے گھوڑے مت دوڑائیے

(105)فتاوٰی رضویہ شریف میں اعلیٰ حضرت علیہ رحمۃُ ربِّ العزّت کا بیان کردہ کوئی مسئلہ بِالفرض آپ کا ذِہن قَبول نہ کرے تب بھی اس کے بارے میں عَقل کے گھوڑے مت دوڑائیے بلکہ نہ سمجھ پانے کو اپنی عقل ہی کی کوتاہی تصوُّر کیجئے۔ دیکھئے! میں  نے اعلیٰ حضرت علیہ رحمۃُ ربِّ العزّت سے اختِلاف کرنے سے آپ کو روکا ہے، رہا تغیّرِزَمان وغیرہ اسبابِ سِتّہ کی روشنی میں  بعض اَحکام میں  رعایت یا تبدیلی کا مسئلہ تو اسے اِختِلاف کرنا نہیں  کہتے، اِس ضِمن میں  جو فیصلہ اَکابِر علمائے اہلسنّت کریں  اُس پر عمل کیجئے۔

اسبابِ سِتّہ

 



Total Pages: 41

Go To