Book Name:Ashkon Ki Barsat

سے براہِ راست سرورِ کائنات صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کے ارشادات بھی سنے ہیں ۔     چُنانچِہ حضرتِ سیِّدُنا واثِلَہ بِن اَسْقَع رضی اللہ تعالٰی عنہ سے سُن کر امامِ اعظم ابو حنیفہ رضی اللہ تعالٰی عنہ نے یہ رِوایت بیان فرمائی ہے کہ اللہ کے پیارے حبیب ،   حبیبِ لبیب،  طبیبوں کے طبیب صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا فرمانِ عبرت نشان ہے: اپنے بھائی کی شُماتَت نہ کر   (یعنی اُس کی مصیبت پر اظہار ِمُسرَّت نہ کر )  کہ   اللہ عَزَّوَجَلَّ   اُس پر رَحم کرے گا اور تجھے اس میں مبتَلا کر دے گا۔     (سُنَنِ تِرمِذی ج۴ ص۲۲۷حدیث۲۵۱۴)          

ہے نام نُعمان ابنِ ثابِت،   ابو حنیفہ  ہے ان کی کُنیَت

پکارتا ہے یہ کہہ کے عالَم،   امامِ اعظم ابو حنیفہ  (وسائلِ بخشش ص ۲۸۳)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                              صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

حنفیوں کے لئے مغفِرت کی بِشارت

          سیِّدُنا امامِ اعظم عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ الْاَکْرَم نے اپنی زندَگی میں پَچپن  (55)  حج کئے۔    جب آخِری بار حج کی سعادت حاصل کی تو خُدّامِ کعبۂ مُشَرَّفہ نے آپ رضی اللہ تعالٰی عنہ کی خواہِش پر بابُ الکعبہ کھول دیا،   آپ رضی اللہ تعالٰی عنہ بَصَد عجز و نیاز اندر داخِل ہوئے اور بیتُ اللہکے دو سُتُونوں کے درمِیان کھڑے ہوکر دو۲ رَکعَت میں پورا قرآنِ پاکخَتْم کیا ،   پھر دیر تک رو رو کرمُناجات کرتے رہے،   آپ رضی اللہ تعالٰی عنہ مشغول دعا تھے کہ بیتُ اللہ کے ایک گوشے   (یعنی کونے) سے آواز آئی:  ’’تم نے اچّھی طرح ہماری مَعرِفت   (یعنی پہچان)  حاصِل کی اورخُلوص کے ساتھ خدمت کی،  ہم نے تم کو بخشا اورقِیامت تک جو تمہارے مذہب پر ہوگا   (یعنی تمہاری تقلید کرے گا)  اُس کو بھی بخش دیا۔   ‘‘   (دُرِّمُختار ج ۱ ص ۱۲۶۔   ۱۲۷)  اَلْحَمْدُلِلّٰہ عَزَّ وَجَلَّ ہم کس قَدَر خوش نصیب ہیں کہ حضرتِ سیِّدُنا امامِ اعظم ابو حنیفہ عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ الْاَکْرَم کا دامنِ کرم ہمارے ہاتھوں میں آیا ۔    

مَروں شہا !  زیرِسبز گنبد،   ہو  میرا  مدفن  بقیعِ غَرقَد

کرم ہو بَہرِ رسولِ اکرم ،   امامِ اعظم ابو حنیفہ  (وسائلِ بخشش ص ۲۸۳)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                              صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

روضۂ شاہِ اَنام  سے جوابِ سلام

    ہمارے امامِ اعظم عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ الْاَکْرَم پرشَہَنشاہِ اُمم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا بے حدلُطف و کرم تھا۔    مدینۂ منوَّرہ زَادَھَا اللہُ شَرَفاً وَّ تَعْظِیْماً میں جب آپ رضی اللہ تعالٰی عنہ  نے سرکارِ نامدار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے روضۂ پُر انوار پر اسطرح سلام عرض کیا:  اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا سَیِّدَ الْمُرْسَلِیْنتو روضۂ انور سے جواب کی آواز آئی:  وَعَلَیْکَ السَّلَامُ یَا اِمَامَ الْمُسْلِمِیْن۔     (تذکرۃُ الاولیاء ص۱۸۶ انتشارات گنجینہ تہران)  

تمہارے دربار کا گدا ہوں ،   میں سائلِ عشقِ مصطَفٰے ہوں

کرو کرم بہرِ غوثِ اعظم ،   امامِ اعظم ابو حنیفہ  (وسائلِ بخشش ص ۲۸۳)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                              صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

تاجدارِ رسالت  کی بِشارت

          سیِّدُنا امامِ اعظم ابو حنیفہ رضی اللہ تعالٰی عنہ نے جب تَحصیلِ علم سے فراغت حاصِل کرلی تو گوشہ نشینی کی نیَّت فرمائی۔    ایک رات جنابِ رسالت مآب صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی خواب میں زیارت ہوئی۔    میٹھے میٹھے مصطَفٰے صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا:  ’’اے ابو حنیفہ!    اللہ عَزَّوَجَلَّ نے آپ کو میری سنَّت زندہ کرنے کیلئے پیدا فرمایا ہے،   آپ گوشہ نشینی کا ہرگز قصد  (یعنی ارادہ)  نہ کریں ۔   ‘‘   (تذکرۃُ الاولیاء ص۱۸۶)  

عطا ہو خوفِ خدا  خدارا،   دو الفتِ مصطَفٰے  خدارا

کروں عمل سنّتوں پہ ہر دم،   امامِ اعظم ابو حنیفہ  (وسائلِ بخشش ص ۲۸۳)

 



Total Pages: 14

Go To