Book Name:Wasail e Bakhshish

 

فَضائیں   منوّر ہوائیں   معطَّر

خدا کی قسم تھا سماں   کیف آور

دلوں   پر بھی اِک وَجد سا چھا گیا تھا

مزہ خوب رَمضان میں   آرہا تھا

کلیجے میں   ٹھنڈک تھی ، چہرے پہ پانی

دلوں   میں   بھی تھی کس قَدَر شادمانی

سُکوں   ماہِ رَمضاں   میں   کیسا ملا تھا

مزہ خوب رَمضان میں   آرہا تھا

مسلماں   تھے خوش رُخ پہ رونق بڑی تھی

خدا کے کرم کی برستی جھڑی تھی

عبادت میں   دل کس قَدَر لگ گیا تھا

مزہ خوب رَمضان میں   آرہا تھا

 

سرِ شام اِفطار کی رونقیں   تھیں 

بوقتِ سَحَر کس قَدَر بَرَکتیں   تھیں 

سُرور آرہا تھا مزہ آرہا تھا

مزہ خوب رَمضان میں   آرہا تھا

مقدّر نے کی یاوَری ساتھ جن کے

مساجِد  میں    وہ  مُعتَکِف  ہو گئے  تھے

عبادت کا کیا خوب جذبہ ملا تھا

مزہ خوب رَمضان میں   آرہا تھا

عبادت میں   عُشّاق لذّت تھے پاتے

 



Total Pages: 406

Go To