Book Name:Wasail e Bakhshish

حشر میں   عطارؔ آئیں  ، آپ اُن پر رحم کھائیں 

اپنے دامن میں   چُھپائیں  ، اور رب سے بخشوائیں 

[یانبی سلامٌ علیکَ یارسول سلامٌ علیکَ

یاحبیب سلامٌ علیکَ صلوٰۃُ اللّٰہِ علیکَ]

 

اے مدینے کے تاجدار تجھے اہلِ ایماں   سلام کہتے ہیں 

اے مدینے کے تاجدار تجھے       اہلِ ایماں   سلام کہتے ہیں

تیرے عُشّاق تیرے دیوانے     جانِ جاناں   سلام کہتے ہیں

جو مدینے سے دور رہتے ہیں          ہِجر([1])و فُرقت کا رنج سہتے ہیں

وہ طلب گارِ دید رو رو کر             اے مِری جاں   سلام کہتے ہیں

جن کو دنیا کے غم ستاتے ہیں         ٹھوکریں   در بدر کی کھاتے ہیں

غم نصیبوں   کے چارہ گر تم کو        وہ پریشاں   سلام کہتے ہیں

دُور دنیا کے رنج و غم کر دو          اور سینے میں   اپنا غم بھر دو

اُن کو چشمانِ تَر عطا کر دو            جو بھی سلطاں   سلام کہتے ہیں

جو تِرے عشق میں   تڑپتے ہیں        حاضری کے لئے ترستے ہیں

اذنِ طیبہ کی آس میں   آقا          وہ پُر ارماں   سلام کہتے ہیں

 

تیرے روضے کی جالیوں   کے پاس      آقا رحم و کرم کی لیکر آس

کتنے دُکھیارے روز آ آ کے              شاہِ ذیشاں   سلام کہتے ہیں

آرزوئے حرم ہے سینے میں               اب تو بلوائیے مدینے میں

تجھ سے تجھ ہی کو مانگتے ہیں   جو           وہ مسلماں   سلام کہتے ہیں

رُخ سے پردے کو اب اٹھا دیجے       اپنے قدموں   سے اب لگا لیجے

آہ! جو نیکیوں   سے ہیں   یکسر([2])            خالی داماں   سلام کہتے ہیں

 



[1]     جدائی   ۔

[2]     بالکل۔مکمل طور پر   ۔



Total Pages: 406

Go To