Book Name:Wasail e Bakhshish

 

اے بِیا بانِ عَرب تیری بہاروں   کو سلام

(یہ کلام ۱۴۱۴ھ کے مبارک سفر میں   مکہ مکرمہ زادہا اللّٰہ شرفاوتعظیما میں   لکھا گیا )

اے بِیابانِ عَرب تیری بہاروں   کو سلام

تیرے پھولوں   کو تِرے پاکیزہ خاروں   کو سلام

جَبَلِ نور و جَبَلِ ثَور اور ان کے غاروں   کو سلام

نور برساتے پہاڑوں   کی قِطاروں   کو سلام

جھومتے ہیں   مسکراتے ہیں   مُغیلانِ ([1])عَرَب

خوب صورت وادِیوں   کو ریگزاروں   کو سلام

رات دن رحمت برستی ہے جہاں   پر جھوم کر

ان طوافِ کعبہ کے رنگیں   نظاروں   کو سلام

عشق میں   دیوارِ کعبہ سے جو لپٹے ہیں   وہاں 

ان سبھی دیوانوں   سارے بے قراروں   کو سلام

 

حجرِ اَسود، باب و میزاب و مقام و مُلتَزم

اور غلافِ کعبہ کے رنگیں   نظاروں   کو سلام

مُستجار و مُستجاب و بیرِ زم زم اور مَطاف

اور حَطیمِ پاک کے دونوں   کَناروں   کو سلام

رکنِ شامی و عراقی و یمانی کو بھی اور

جگمگاتے نور برساتے مَناروں   کو سلام

جو مسلماں   خانۂ کعبہ کا کرتے ہیں   طواف

ان کو بھی اور سارے ہی سَجدہ گزاروں   کو سلام

خوب چُومے ہیں   قدم ثَور و حِرا نے شاہ کے

 



[1]     کانٹے کا درخت   ۔



Total Pages: 406

Go To