Book Name:Wasail e Bakhshish

’’یہ عطارؔ میرا ہے‘‘ مرشِد خدارا

سنا دو یہ اِرشاد یاغوثِ اعظم

 غِبْطہ کی تعریف

غبطہ(غِبْ۔طَہ)سے مرادیہ ہےکہ انسان دوسرے کی نعمت کا زَوال(یعنی ضائع ہو جانا)نہ چاہےبلکہ  ویسی ہی نعمت  کی اپنے لئےتمنّا کرےتویہ غِبْطہ(یعنی رشک) کہلاتا ہے، نہ  یہ  حسد میں داخل  اورنہ ہی حرام۔(طریقہ محمدیہ ج۱ص۶۱۰)

 

ہو بغداد کا پھر سفر غوثِ اعظم

ہو بغداد کا پھر سفر غوثِ اعظم             مہیا وَسائل وہ کر غوثِ اعظم

شَہَنشاہِ جِنّ و بشر غوثِ اعظم                ہو ولیوں   کے بھی تاجور غوثِ اعظم

میں   پہلے بھی بغداد حاضِر ہوا تھا              اِجازت دو بارِ دِگر غوثِ اعظم

میں   گلیوں   میں   بستر جما دوں   پھر آکر         دو بغداد میں   مجھ کو گھر غوثِ اعظم

دکھا دو مزارِ منوَّر کے جلوے                دکھا دو پھر اپنا نگر غوثِ اعظم

خدا و نبی کی جو الفت میں   روئے             عطا کر دو وہ چشمِ تر غوثِ اعظم

عطا  ہو  مجھے  اپنے  اللّٰہ  کا  ڈر                     دو عشقِ شہِ بحر و بر غوثِ اعظم

مِرے میٹھے مرشِد مجھے پھر شرف دے        یہ سر ہو ترا سنگِ در غوثِ اعظم

مِلا سلسلہ قادِری فضلِ رب سے             میں   ہوں   کس قدر بختور غوثِ اعظم

ہمیشہ ترا عشق بے چین رکّھے                عطا ہو وہ سوزِ جگر غوثِ اعظم

مجھے اپنی الفت کی خیرات دیدو              مری خالی جھولی دو بھر غوثِ اعظم

مِری ڈوبتی ناؤ کو دو سہارا                      ذرا جلد آؤ اِدھر غوثِ اعظم

 

یہاں   بھی سہارا وہاں   بھی سہارا                    اِدھر غوثِ اعظم اُدھر غوثِ اعظم

مجھے دشمنوں   نے کہیں   کا نہ چھوڑا                 ہے فریاد! ٹوٹی کمر غوثِ اعظم

عَدو کے مقابِل وہ ہمّت عطا ہو                     رہوں   کاش! سِینہ سِپَر غوثِ اعظم

مدد المدد مُرشِدی ورنہ دشمن                    چلا جان سے مار کر غوثِ اعظم

زباں   پر رہے میری یاپیر و مُرشِد                ترا ذکر آٹھوں   پَہر غوثِ اعظم

مرا حُبِّ دنیا سے پیچھا چھڑا دے                 عطا اپنی الفت تُو کر غوثِ اعظم

 



Total Pages: 406

Go To