Book Name:Wasail e Bakhshish

مدینے کے مسافِر پر چھما چھم رَحمتوں   کی اب

ہے بارِش خوب زوروں   پر مدینہ آنے والا ہے

 

پڑھو اے زائرو! ملکر دُرُود اُن پر سلام اُن پر

لُٹاؤ اَشک کے گوھر مدینہ آنے والا ہے

ٹَھَہر جا روحِ مُضطَر تُو نکل جانا مدینے میں 

خُدارا اب نہ جلدی کر مدینہ آنے والا ہے

دُرُودِ پاک کے گجر ے سلام و نعت کے تحفے

بڑھو اے زائرو! لیکر مدینہ آنے والا ہے

خوشی سے زائرو! جھومو فَضائیں   جھوم کر چومو

بس آیا رَوضۂ انور مدینہ آنے والا ہے

نکال اب پاؤں   سے جوتا قریبِ طیبہ تُو پہنچا

اے زائر! ہوش اب تو کر مدینہ آنے والا ہے

وہ برسا نور کا جھالا سماں   ہے خوب اُجیالا

ہے کیسا دل کُشا منظر مدینہ آنے والا ہے

 

مبارَک! غم کے ماروں   کو مبارَک!بے سہاروں   کو

کُھلے ہیں   رَحمتوں   کے در مدینہ آنے والا ہے

فضائیں  بھی منوَّر ہیں  ، ہوائیں  بھی مُعطَّر ہیں   

سماں   رنگین و کیف آور مدینہ آنے والا ہے

مِری ہو آرزو پوری مجھے مل جائے منظوری

بقیعِ پاک کی سروَر مدینہ آنے والا ہے

وسیلہ چار یاروں   کا اُحُد کے جاں   نثاروں   کا

دکھا دو اِک جھلک سرور مدینہ آنے والا ہے

نکالو، مصطَفٰے پیارے! خیالِ غیر اب سارے

 



Total Pages: 406

Go To