Book Name:Wasail e Bakhshish

اندھیروں  میں   بھٹکتے پھرنے والوں   کو مبارَک ہو

تمہیں   حق سے ملانے آج رہبر آنیوالا ہے

مبارَک بدنصیبوں   کو مبارَک ہو غریبوں   کو

جہاں   میں   بے بسوں   کا سایہ گُستر([1])آنے والا ہے

گنہگارو نہ گھبراؤ سِیَہ کارو نہ غم کھاؤ

سنو مُژ([2])دہ شَفِیْعِ روزِ محشر آنے والا ہے

لئے پرچم اُتر آئے ہیں  جبریل آسماں   سے آج

جہاں   میں   آج مولیٰ کا پیمبر آنے والا ہے

کرو گھر گھر چَراغاں   سبز پرچم آج لہراؤ

مچاؤ مرحبا کی دُھوم سرور آنے والا ہے

 

اگر نہ آج جھومو گے تو کب جُھومو گے دیوانو!

مچل جاؤ تمہارا آج یاوَر آنے والا ہے

تَراوَت ([3])کیوں   نہ ہو حاصل مرے قلب و جِگر کو آج

جہاں  میں   بَحرِ رَحمت کا شِناوَر آنے والا ہے

دلِ غمگین کو مل جائے گا سامان راحت کا

سُرورِ دل، قرارِ جانِ مُضطَر آنے والا ہے

جو ہے سردار، عالَم کے سبھی سجدہ گزاروں   کا

خدا کا آج وہ سچّا ثناگر آنے والا ہے

مبارَک غم کے مارو! غم غَلَط ہوجائیں   گے سارے

حبیبِ حق مُداوا ([4])غم کا لے کر آنے والا ہے

جہاں   میں  ظُلمتوں   کا چاک ہو گاآج سے سینہ

خدا کے فضل سے ماہِ مُنَوَّر آنے والا ہے

 

 



[1]     سایہ کرنے والا  

[2]    خوشخبری

[3]     تازگی۔ٹھنڈک   

[4]     علاج



Total Pages: 406

Go To