Book Name:Wasail e Bakhshish

کب آقائے مدینہ در پہ میری حاضِری ہوگی

شَہنشَاہِ مدینہ دو تڑپنے کا قرینہ دو

وہ آنکھ آقا عنایت ہو کہ جو اَشکوں   بھری ہوگی

بنالو اپنا دیوانہ بنالو اپنا مستانہ

خَزانے میں   تمہارے کیا کمی پیارے نبی ہوگی

غمِ دُوری رُلاتاہے مدینہ یاد آتا ہے

تسلّی رکھ اے دیوانے تری بھی حاضِری ہوگی

مجھے گر دید ہوجائے تو میری عید ہوجائے

ترا دیدار جب ہوگا مجھے حاصِل خوشی ہوگی

خَزاں   کا سخت پَہرا ہے غموں   کا گُھپ اندھیرا ہے

ذرا سا مسکرا دو گے تو دِل میں   روشنی ہوگی

 

الٰہی گنبدِ خَضرا کے سائے میں   شہادت دے

مِری لاش اُن کے قدموں   میں   نہ جانے کب پڑی ہوگی

ہمیں   بھی اذن مل جائے شہا قدموں   میں   آنے کا

نہ جانے کب مدینے میں   ہماری حاضِری ہوگی

مدینہ میرا ہو مَسکن بقیعِ پاک ہو مَدفَن

مِری اُمیدکی کھیتی نہ جانے کب ہری ہوگی

تڑپ کر  غم  کے  مارو  تم  پکارو    یارسولَ اللّٰہ

تمہاری ہر مصیبت دیکھنا دم میں   ٹَلی ہوگی

اگر وہ چاند سے چِہرے کو چمکاتے ہوئے آئے

غموں  کی شام بھی صُبحِ بہاراں   بن گئی ہوگی

فِرِشتے آچکے سر پر بچالو شافِعِ محشر

چھُپا دامن میں   لو سرور سزا ورنہ کڑی ہوگی

گناہوں   پر نَدامت ہے اور اُمّیدِ شَفاعت ہے

کرم ہوگا رِہائی نارِ دوزخ سے جبھی ہوگی

سَرِمحشر وہ جس دم جلوئہ زیبا دکھائیں   گے

 



Total Pages: 406

Go To