Book Name:Wasail e Bakhshish

چھاؤں   تو ہر جگہ کی ٹھنڈی پَر                        دُھوپ بھی واہ وا مَدینے کی

کَیف آوَر ہے موسِمِ سَرما                           گرمیاں   مرحبا مدینے کی

پُھول تو پُھول خار بھی دِل کَش                      پتَّیاں   دلکُشا مدینے کی

ہے چمن تَو حَسین کانٹوں   کی                        جھاڑیاں   خوشنما مدینے کی

ہے پہاڑوں   پہ نُور کی چَادَر                           وادِیاں   مرحبا مدینے کی

سبز گنبد کا حُسن کیا کہنا                             جالیاں   دلکُشا مدینے کی

کَیف و مَستی بھرا سَماں   ہے واں                      کیف آوَر فَضا مدینے کی

ہر گھڑی رحمتیں   برستی ہیں                           ہے مبارک ہوا مدینے کی

ذرّہ ذرّہ وہاں   کا نُورانی                               ہے مُنوَّر فضَا مدینے کی

ظُلمتِ شب ڈرائے گی کیونکر!                      ہر طرف ہے ضِیا مدینے کی

غمزدو آنکھ کھول کے دیکھو                          چھاگئی ہے گھٹا مدینے کی

کیوں   ہو مایُوس اے مریضو! تم                      لے لو خاکِ شِفا مدینے کی

جھولیاں   بھر کے تُو بھی لائیگا                       راہ لے اے گدا مدینے کی

میرے مُرجھائے دِل کو جھونکا دے               آکے بادِ صبا مدینے کی

 

قافلے حاجیوں   کے ہیں   تیّار                            دے دو رُخصت شہا! مدینے کی

ہے تمنّا بقیعِ غَرقَد کی                                   بھائیو! دو دُعا مدینے کی

سَلْطَنَت کی طَلَب نہیں   آقا                            ہو گدائی عطا مدینے کی

کاش! ہر آن یاد تڑپائے!                               ہر نَفَس([1]) ہو صدا مدینے کی

رَات دِن یہ تمہارے دیوانے                          مانگتے ہیں   دُعا مدینے کی

ہجر میں   رو رہے ہیں   دیوانے                            یاد آئی شہا مدینے کی

اپنے جُوتے اُتار لینا تُم                                  جب گلی دیکھنا مدینے کی

چُوم کے پُھول، دُھول کو بھی تم                        جُھوم کے چُومنا مدینے کی

خاکِ در کا لگا کے سُرمہ تُم                              راحتیں   لُوٹنا مدینے کی

ایک مُدّت ہُوئی جُدائی کو                               ہو اجازت عطا مدینے کی

خُوب جُھومیں   گے لَوٹ جائیں   گے                      دیکھتے ہی فَضا مدینے کی

مُجھ کو قدموں   میں   مَوت دے کر پھر                 دے دو تھوڑی سی جا مَدینے کی

ہائے افسوس! میں   بنا انساں                              کیوں   نہ مٹّی بنا مدینے کی

 



[1]     سانس



Total Pages: 406

Go To