Book Name:Wasail e Bakhshish

نکل جائے تمہارے روبرو دم یارسولَ اللّٰہ

مِرے آقا بہائے اشک جو ہِجرِ مدینہ میں 

عطا کردو مجھے وہ چشمِ پُر نَم یارسولَ اللّٰہ

ہمارے دل کی ہر دھڑکن سے طیبہ کی صَدا نکلے

رہے ذِکرِ مدینہ لب پہ ہر دم یارسولَ اللّٰہ

شہا! چَشمِ کرم ہو تِشنَگانِ دید([1])پر اب تو

تمہاری دید کا شَربت پئیں   ہم یارسولَ اللّٰہ

 

گُناہوں   کا اندھیرا چھا گیا ہے ہم کمینوں   پر

خداراہوکرم نُورِ مجسَّم یارسولَ اللّٰہ

جَہاں   جاؤں   جِدھر جاؤں   مدینے کی فَضاپاؤں 

مِلے لُطفِ حُضوری جَانِ عالَم یارسولَ اللّٰہ

طوافِ خانۂ کعبہ کا تم مُجھ کو شَرَف دے دو

پیوں   مکّے میں   آکر آبِ زم زم یارسولَ اللّٰہ

مدینے جب میں   پہنچوں   تو کلیجا میرا پھٹ جائے

وَہاں   رو رو کے اپنا تَوڑ دُوں   دَ م یارسولَ اللّٰہ

بقیعِ پاک میں   مُجھ کو جگہ سرکار مل جائے

طُفیلِ پیرومرشِد غوثِ اعظم یارسولَ اللّٰہ

حُسین ابنِ علی کے واسِطے کردو کرم جِن کا

کہ ہے یومِ شہادَت دس محرّ م یارسولَ اللّٰہ

وُہی اُمَّت خطاؤں   میں   پڑی ہے رات میں   جن کے

لئے رَویا کئے مانِندِ شَبنَمیارسولَ اللّٰہ

شہا! عطارؔ کا دِل ٹوٹ جائے! کاش دنیا سے

رہے گُم آپ کی اُلفت میں   ہر دَم  یارسولَ اللّٰہ

 

 



[1]     دیدار کے پیاسے ۔



Total Pages: 406

Go To