Book Name:Wasail e Bakhshish

لُطف جو ہے طیبہ میں   وہ کہاں   وطن میں   ہے

کیا کروں   گا جا کر گھر، میں   مدینہ چھوڑ آیا

لَوٹ کر نہ میں   آتا، کاش! جان دے دیتا

گِر کے خاکِ طیبہ پر، میں   مدینہ چھوڑ آیا

آہ! دن مدینے کے، جلد جلد گزرے تھے

ہائے جلد چُھوٹا در، میں   مدینہ چھوڑ آیا

 

دن کو بھی سُرور آتا، شب کو بھی ضَرور آتا

کیا فَضا تھی کیف آور، میں   مدینہ چھوڑ آیا

تھا وہاں   سماں   نوری، رنج و غم سے تھی دُوری

آہ! نور کے پیکر! میں   مدینہ چھوڑ آیا

وقتِ ہجر جب آیا، پھوٹ پھوٹ کر رویا

درد ناک تھا منظر، میں   مدینہ چھوڑ آیا

ہِجر کا ہے صدمہ اور سینہ و جگر میرے

رکھ کے قلب پر پتّھر، میں   مدینہ چھوڑ آیا

ہِجر کے میں   صدموں   سے، چُور چُور زخموں   سے

چل رہا تھا رَو رَو کر، میں   مدینہ چھوڑ آیا

جب مدینہ چُھوٹا تھا غم کا کوہ([1]) ٹُوٹا تھا

جان و دل لئے مُضطَر میں   مدینہ چھوڑ آیا

سبز گنبد اور مینار، آہ! چُھٹ گئے سرکار

پھر بُلایئے سروَر، میں   مدینہ چھوڑ آیا

 

تھا غمِ مدینہ میں  ، فُرقتِ مدینہ میں   

دل مرا بَہُت مُضطَر، میں   مدینہ چھوڑ آیا

 میرے حامی و ہَمدم! دُور ہوں   جہاں   کے غم

 



[1]     پہاڑ۔



Total Pages: 406

Go To