Book Name:Wasail e Bakhshish

وِردِ لب ہو، ’’مدینہ مدینہ‘‘ جب چلے سُوئے طیبہ سفینہ

مجھ کو آقا! مدینے بلالو!حسرتیں    میرے دل کی  نکالو

غوثِ اعظم کا صدقہ نبھالو، اب تو کہدو مجھے ’’چل مدینہ‘‘

جب مدینے میں   ہو اپنی آمد، جب میں   دیکھوں   ترا سبز گنبد

ہِچکیاں   بَاندھ کر روؤں   بے حد، کاش!آجائے ایسا قرینہ

کاش! اِس شان سے حاضِری ہو، مجھ پہ دیوانگی چھاگئی ہو

ہر رُکاوٹ وہاں   ہٹ گئی ہو، بس نظر میں   ہوں   شاہِ مدینہ

مشکلیں  ، آفتیں   دور ہوں   گی، ظلمتیں   غم کی کافور ہونگی

میری آنکھیں   بھی پُر نور ہونگی، اِک جھلک! میرے ماہِ مدینہ

 

دِل سے اُلفت جہاں   کی نکالو، اِس تباہی سے مولیٰ بچا لو

مجھ کو دیوانہ اپنا بنالو، میرا سینہ بنا دو مدینہ

مجھ پہ آقا! نگاہِ کرم ہو، دُور دُنیا کا رنج واَلَم ہو

بس عطا اپنا غم چشمِ نم ہو، دیجئے مجھ کو پُر سوز سینہ

میں   مُبلّغ بنُوں   سنّتوں   کا، خُوب چرچا کروں   سنّتوں   کا

یاخُدا! درس دوں   سنّتوں   کا، ہوکرم! بَہرِخاکِ مدینہ

آنسوؤں   کی جھڑی لگ گئی ہے، یاد آقا کی تڑپارہی ہے

اِس پہ دیوانگی چھاگئی ہے، یاد آیا ہے اس کو مدینہ

بعدِ مُردَن یہ احسان کرنا، منہ پہ خاکِ مدینہ چھڑکنا

اور میرے کفن پر لگانا، گر مُیَسَّر ہو اُن کا پسینہ

ہے تمنائے عطارؔ یارب! ان کے جلووں   میں   یوں   موت آئے

جھوم کر جب گِرے میرا لاشہ، تھام لیں   بڑھ کے شاہِ مدینہ

 

 



Total Pages: 406

Go To