Book Name:Karamaat e Farooq e Azam رضی اللہ تعالیٰ عنہ

عَنْہ) سے بہتر کسی آدَمی پر سورج طُلوع نہیں ہوا۔ (تِرمِذی ج۵ ص۳۸۴ حدیث۳۷۰۴)

تَرجُمانِ نبی ہم زَبانِ نبی

جانِ شانِ عدالت پہ لاکھوں سلام(حدائقِ بخشش شریف)

{2}آسمان کے تمام فرشتے حضرت عُمَر(رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ) کی عزَّت کرتے ہیں اور زمین کا ہر شیطان ان کے خوف سے لرزتا ہے(1) {3}لَا یُحِبُّ اَبَا بَکْرٍ وَّ عُمَرَ مُنَافِقٌ وَلَا یُبْغِضُہُمَا مُؤمِنٌ یعنی (حضرت ) ابوبکر اور(حضرت ) عمر (رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ)سے مُؤمِن مَحَبَّت رکھتا ہے اور مُنافِق ان سے بُغْض رکھتا ہے(2) {4} عُمَرُ سِرَاجُ اَہْلِ الْجَنَّۃِیعنی (حضرت ) عُمَر (رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ) اَہلِ جنّت کے چَراغ ہیں۔(3) {5} ہٰذَا رَجُلٌ لاَّ یُحِبُّ الْبَاطِلَیعنی یہ( حضرت عُمَر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ) وہ شخص ہے جو باطِل کو پسند نہیں کرتا(4) {6}’’تمہارے پاس ایک جنتی شخص آئے گاتو۔‘‘ حضرت عُمَر (رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ) تشریف لائے (5){7}رِضَا اللہِ رِضَا عُمَرَ وَرِضَا عُمَرَ رِضَا اللہِ یعنی اللہ عَزَّوَجَلَّ کی رضاحضرت عُمَر (رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ) کی رضا ہے اور حضرت عُمَر (رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ) کی رضا اللہ تَعَالٰی کی رضا ہے(6){8} اِنَّ اللہَ جَعَلَ الْحَقَّ عَلٰی لِسَانِ عُمَرَ وَقَلْبِہٖ یعنی ’’اللہ عَزَّوَجَلَّ نے عُمَر (رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ) کی زبان اوردل پر حق جاری فرمایا۔‘‘(7)

مُفَسّرِشہیر حکیمُ الْاُمَّت حضر ت ِ مفتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الْحَنّان اِس حدیثِ

مـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــدینـــہ

(1): تاریخ دمشق ج ۴۴ ص ۸۵ (2) ایضاًص۲۲۵ (3) مَجْمَعُ الزَّوائِد ج۹ ص ۷۷ حدیث ۱۴۴۶۱ (4) مُسندِ اِمام احمد ج۵ص۳۰۲حدیث۱۵۵۸۵(5)تِرمِذی ج۵ ص۳۸۸حدیث ۳۷۱۴(6)جَمْعُ الْجَوامِع لِلسُّیُوطی ج۴ ص۳۶۸ حدیث ۱۲۵۵۶ (7)تِرمِذی ج۵ ص۳۸۳ حدیث ۳۷۰۲


 

 



Total Pages: 48

Go To