Book Name:Aala Hazrat رحمۃ اللہ علیہ Ki Infiradi Koshishain

                                                                                                                        اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                                                     صلَّی اللہ تعالٰی عَلٰی محمَّد

 (8)    سونے کی انگوٹھی پہننے والے کی اِصلاح

          عصر کی نماز کے بعدبڑاہی پُرکیف سَماں تھا، دُورونزدیک سے آئے ہوئے لوگ مجدد ِ دین وملت ، اعلیٰ حضرت  عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّتکی بارگاہ میں حاضر ہوکر ایک سچے عاشقِ رسول کی زیارت و ملاقات سے اپنے دلوں کو منوّر کر رہے تھے ۔ اتنے میں ایک صاحب سونے کی انگوٹھی پہنے ہوئے حاضر ہوئے توحامیٔ سنت، ماحیٔ بدعت ، اعلیٰ حضرت  عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّت  نے نَہْیٌ عَنِ الْمُنْکَر (یعنی برائی سے روکنے ) کا فریضہ انجام دیتے ہوئے کچھ یوں ارشاد فرمایا :  ’’ مرد کو سونا پہننا حرام ہے۔ صرف ایک نَگ کی چاندی کی انگوٹھی جو ساڑھے چار ماشہ سے کم کی ہواُس کی اجازت ہے۔ جوکوئی سونے، تانبے یا پیتل کی انگوٹھی پہنے یا چاندی کی ساڑھے چار ماشے سے زیادہ وزن کی ایک انگوٹھی پہنے یا کئی انگوٹھیاں پہنے اگرچہ سب مل کر ساڑھے چار ماشے سے کم ہوں تو اسکی نماز مکروہ تحریمی ہے۔ ‘‘  ایک عالمِ باعمل کے اس کلام نے ان صاحب کے دل پر جو روحانی اثر کیا ہوگااسے بیان کرنے کی حاجت نہیں ۔  (ملفوظاتِ اعلیٰ حضرت، حصہ دوم ، ص۱۹۷، مکتبۃ المدینہ)

اللہ عَزَّوَجَلَّ کی اعلٰی حضرت  پَر رَحمت ہو اور ان کے صد قے ہماری بے حسا ب مغفِرت ہو۔

                                                                                                                                                اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                                               صلَّی اللہ تعالٰی عَلٰی محمَّد

 (9)   مِعمَار پر انفرادی کوشش

          خلیفۂ اعلی حضرت مولانا سیدایوب علی  علیہ رحمۃاللہ القوی  کا بیان ہے : ’’  مسجد شریف کی توسیع کے لئے غسل خانہ، کنواں ، وضوخانہ وغیرہ پر چھت ڈالنی تھی۔ مستری علی حسین قادری رضوی مرحوم  علیہ رحمۃالقیوم نے سُتُونوں کی تعمیر شروع ہی کی تھی کہ ظہر کے وقت اعلیٰ حضرت  عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّت تشریف لائے اور ستونوں کو دیکھ کرارشادفرمایا : ’’  بھائی علی حسین! مسجد کے لئے یہ سُتُون کچھ اچھے معلوم نہیں ہوتے ، انہیں خوبصورت بنائیے ۔ ‘‘  پھر فرمایا: ’’ میں نے اپنے ذاتی مکان کی تعمیر کے وقت کبھی دخل اندازی نہیں کی ۔صرف مضبوط و خوبصورت الماریاں بنانے کے لئے ضرور کہا تھاتاکہ دینی کتابیں محفوظ رہیں ۔ ‘‘  (حیاتِ اعلیٰ حضرت، ج۱، ص۹۶)

مَدَنی پھول

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! اِس ایمان افروز حکایت سے ہمیں یہ درس ملا کہ دینی اُمور میں ہمیشہ خوش اُسلوبی سے کام کرنا چاہئے۔ مسجدوں اور دیگر دینی عمارتوں میں صفائی اور معیار کو پیش نظر رکھنا چاہئے۔ یہ نہ ہو کہ اپنے ذاتی گھروں پر تو خوب دل کھول کر خرچ کریں لیکن جب دین کا معاملہ آئے تو سستی وکوتاہی اور کنجوسی سے کام لیں ۔ دین کا درد رکھنے والوں کو یہ بات کسی طرح بھی ز یب نہیں دیتی۔اللہ تبارک وتعالٰی ہمیں شیطا ن کے مکرو فریب سے بچنے کی توفیق عطا فرمائے اور دین اسلام کی سربلندی کے لئے تن، من، دھن قربان کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔اٰمین بجاہ ا لنبی الامین صلی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہ وسلم   

اللہ عَزَّوَجَلَّ کی اعلٰی حضرت  پَر رَحمت ہو اور ان کے صد قے ہماری بے حسا ب مغفِرت ہو۔

                                                                                                                                                اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                                                               صلَّی اللہ تعالٰی عَلٰی محمَّد

 



Total Pages: 20

Go To