Book Name:Allah Walon Ki Batain Jild 1

حَتّٰی یَقُوْلُوْا اِذَا مَرُّوْا عَلٰی جَدَثِیْ             اَرْشَدَکَ اللہ مِنْ غَازٍ وَقَدْ رَشَدَا

ترجمہ :   ( ۱ ) …  لیکن میں   اللہعَزَّوَجَلَّسے مغفرت اور ایسی سخت ضرب کا سوال کرتا ہوں   جو جبڑوں   کو پھاڑ دے ۔

                 ( ۲ ) … یا کسی  ( میرے خون کے  ) پیاسے کے ہاتھوں   میں   ایسا نیز ہ ہو جس کا وار آنتو ں   اور کلیجے سے پار ہوجائے  ۔  

                 ( ۳ ) یہاں   تک کہ جب لوگ میری قبر سے گزریں   تو کہیں :  ’’  اللہعَزَّوَجَلَّنے تجھے فلاح بخشی کہ تو نے غازی ہو کر کامیابی پائی ۔  ‘‘  

            راوی بیان کرتے ہیں :  پھر مجاہدین اسلام کا قافلہ روانہ ہوااور شام کی سر زمین پر پڑاؤڈالا ۔ تو انہیں  خبر ملی کہ ہر قل نیبَلْقَاء کے مقام پر ایک لاکھ رومی فوجیوں   کے ہمرا ہ پڑاؤ ڈالا ہوا ہے نیز عرب کے قبائل لَخْم،   جُذَام،   بَلْقَیْن،    بَہْرَاءاور بَلِیکے ایک لاکھ جنگجو اس کے ساتھ مل گئے ہیں   ۔  مسلمان دو راتیں   اس میں   غوروفکر کرتے رہے بالآخریہ فیصلہ ہوا کہ رسول اللہصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کو مکتوب ( یعنی خط )  بھیج کر دشمنوں   کی تعداد سے آگاہ کیا جائے ۔  تو حضرت سیِّدُنا عبداللہبن رَوَاحَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے مجاہدین کوجمع کر کے خطاب کیااورفرمایا :   ’’  اللہعَزَّوَجَلَّکی قسم  !  تم شہادت کی طلب میں   گھر سے نکلے ہو اور اب اسی کو ناپسند جانتے ہوحالانکہ ہم کبھی بھی دشمن سے تعداد ،   قوت وکثرت کی بنا پر نہیں   لڑے بلکہ صرف اپنے دین کے لئے لڑے ہیں   جس کی برکت سے اللہعَزَّوَجَلَّ نے ہمیں   عزت عطا فرمائی ہے ۔ نکلو !  فتح اورشہادت میں   سے ایک اچھائی تو حاصل ہو گی ۔  ‘‘

            راوی بیان فرماتے ہیں  : حضرت سیِّدُنا عبداللہبن رَوَاحَہرَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہکا یہ بیان سن کر تمام مجاہدین پکار اُٹھے :    ’’  اللہعَزَّوَجَلَّکی قسم  !  عبداللہبن رَوَاحَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے سچ کہاہے ۔  ‘‘  پھرتمام مجاہدین جنگ کے لیے چل پڑے ۔   ( [1] )

رونے پرتنبیہ :  

 ( 368 ) …  حضرت سیِّدُنازَید بن اَرقم رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہفرماتے ہیں   کہ ’’   میں   یتیمی میں   حضرت سیِّدُنا عبداللہبن رَوَاحَہ  رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہکی پرورش میں   تھا ۔  جب آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہجنگ ِموتہ کے لئے روانہ ہوئے تو میں   اُونٹ پر آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہکے پیچھے سوار تھا اللہعَزَّوَجَلَّکی قسم  !  ایک رات دورانِ سفر میں   نے آپ  کو یہ اشعار پڑھتے سنا :   

اِذَا اَدْنَیْتِنِیْ وَحَمَلْتِ رَحْلِیْ        مَسِیْـرَۃَ اَ رْ بَعٍ  بَعْدَ الْحِسَا ءِ

فَشَانُکِ فَانْعِمِیْ وَخَلَاکِ ذَمٌّ        وَلَا اَرْجِعْ اِلٰی اَھْلِیْ وَرَائِیْ

وَآبَ الْمُسْلِمُوْنَ وَغَادَرُوْنِیْ         بِاَرْضِ الشَّامِ مُشْتَھِی الثَّوَاءِ

وَرَدَّکِ کُلُّ ذِیْ نَسَبٍ قَرِیْبٍ         اِلَی الرَّحْمٰنِ مُنْقَطِعَ الْاِخَاءِ

ھُنَالِکَ لَا اُبَالِیْ طَلْعَ بَعْلٍ          وَلَا نَخْلَ اُسَالِفُـھَا رَوَاءِ

ترجمہ :   ( ۱ ) … اے میری سواری !  مقامِ حِساء کے بعد جب تو نے مجھے منزل کے قریب پہنچا دیا اور چار منزل کی مسافت تک میرے کجاوے کو اٹھائے رکھا ۔

                  ( ۲ )  … اب تیرا کام یہ ہے کہ تو مجھے خوش حال رکھے اور خدا کرے کہ تجھے کوئی تکلیف نہ پہنچے البتہ !  میں   واپس اپنے اہل وعیال کی طر ف نہ لوٹوں   ( یعنی شہید ہوجاؤں   )  ۔

                  ( ۳ ) …  اور  ( خدا کرے کہ ) مسلمان غازی بن کر لوٹیں   اور مجھے شام کی سرزمین میں   وہیں   ٹھہرنے کے لئے چھوڑ آئیں   ۔

                  ( ۴ ) …  ( اے نفس !  )  ہر قریبی رشتہ دار تجھ سے اپناتعلق ختم کرکے تجھے رحمن عَزَّوَجَلَّکے سپرد کر دے ۔

                 ( ۵ ) … پھر وہاں   مجھے پھلوں   کے شگوفوں   اور کھجوروں   کے خوشنما باغات کے پیچھے چھوڑ دینے کی کوئی پرواہ نہیں    ۔

            حضرت سیِّدُنا زید بن ارقم رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہفرماتے ہیں : ’’  یہ اشعا ر سن کرمیں   رو پڑا  ۔  ‘‘   آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ نے مجھے آہستہ سے دُرّہ مار کر فرمایا :   ’’  اے نادان  !  تجھے کس چیز کا غم ہے کہ اللہعَزَّوَجَلَّمجھے شہادت عطا فرمائے اورتُو کجاوے پر تنہا بیٹھ کر واپس چلا جائے ۔   ‘‘   ( [2] )

نفس کونصیحتیں :

             حضرت سیِّدُنامحمدبن اِسحاقعَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ الرَّزَّاق سے مروی ہے کہ مجھے ابن عباد بن عبداللہ بن زُبَیر رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُمَانے بتایاکہ انہیں   ان کے کفیل نے جوکہ اس غزوہ میں   شریک تھے،   بتایاکہ جب حضرت سیِّدُنازَید اور حضرت سیِّدُنا جَعْفَر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا شہید ہوگئے تو حضرت سیِّدُناعبداللہبن رَوَاحَہرَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے عَلمِ جہاد اُٹھایا اور گھوڑے پر سوار ہوکر آگے بڑھتے ہوئے نفس میں   کچھ تر دُّد پایا تو اسے مخاطب کرکے فرمایا :   

اَقْسَمْتُ یَا نَفْسُ لَتَنْزِلَنَّہٗ             لَتَنْزِلَنَّہٗ اَوْلَتَکْرَھَنَّہ

اِذَاجَلَبَ النَّاسُ وَشَدُّوْا الرَّنَّۃَ         مَا لِیْ اَرَاکِ تَکْرَھِیْنَ الْجَنَّہ

لَطَالَمَا قَدْ کُنْتِ مُطْمَئِنَّۃً              ھَلْ اَنْتِ اِلَّا نُطْفَۃٌ فِیْ شَنَّہ

ترجمہ :   ( ۱ ) … اے نفس  !  میں   قسم اُٹھاتاہوں   کہ تجھے میدانِ جنگ میں   ضرور جانا پڑے گا چاہے تجھے ناپسند ہو ۔

     ( ۲ ) … جب جنگ میں   لوگوں   کی آوازیں   بلند ہو رہی ہیں   اور لڑائی شدت اختیار کر رہی ہے تو کیا وجہ ہے کہ میں   تجھے جنت کو ناپسند کرتے دیکھتا ہوں   ۔

 



[1]    السیرۃ النبویۃ لابن ہشام ،  ذکرغزوۃ مؤتۃ فی جمادی الأولٰی سنۃ ثمان ،  ص۴۵۷۔

[2]    السیرۃ النبویۃ لابن ہشام ،  ذکرغزوۃ مؤتۃ فی جمادی الأولٰی سنۃ ثمان ،  ص۴۵۸۔



Total Pages: 273

Go To