Book Name:Allah Walon Ki Batain Jild 1

اور خنزیرکاگوشت کھا لے تو وہ معذور ہے  ( یعنی اس پر کوئی گناہ نہیں   )  ۔  ‘‘  

زبان کی حفاظت کادرس :  

 ( 1076 ) … حضرت سیِّدُنا نافع رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہسے روایت ہے کہ حضرت سیِّدُناعبداللہبن عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَانے فرمایا :   ’’ انسان کے اعضاء میں  سب سے زیادہ زبان اس بات کی حق دار ہے کہ اسے  ( فضول باتوں   سے )  پاک رکھا جائے ۔  ‘‘    ( [1] )

کسی پرلعنت نہیں   بھیجتے تھے :  

 ( 1077 ) … حضرت سیِّدُناسالم رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہسے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُنا عبداللہبن عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا نے کبھی کسی خادم پرلعنت نہیں   کی ۔ البتہ ایک خادم پر لعنت کی تھی لیکن پھر اسے آزاد فرما دیا ۔  ‘‘

            اِمام زُہری  عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ الْقَوِی سے مروی ہے کہ ایک مرتبہ حضرت سیِّدُنا عبداللہ بن عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا اپنی خادمہ پر لعنت کرنے لگے توکہا: اَللّٰھُمَّ اَلْعِیعنی :  اے اللہعَزَّوَجَلَّ ! اس پر لع ۔ یعنی  لفظِ لعنت زبان پر پورا نہ لائے اور فرمایا :  ’’ مجھے یہ کلمہ  ( یعنی لعنت )  کہنا پسند نہیں    ۔  ‘‘    ( [2] )

آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کی عاجزی :  

 ( 1078 ) … حضرت سیِّدُنا نافع رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ سے روایت ہے کہ ’’   ایک مرتبہ ایک شخص نے حضرت سیِّدُنا عبداللہبن عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا کو ’’ خَیْرُالنَّاسْ اَوْاِبْنِ خَیْرُالنَّاس ‘‘  کے القابات سے پکارا یعنی :  اے تمام لوگوں   سے بہتریا اے تمام لوگوں   سے بہتر کے صاحبزادے !  ‘‘  تو آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے فرمایا :   ’’ نہ میں   لوگوں   میں   سے بہتر ہوں   اور نہ لوگوں   میں   سے بہتر کا بیٹا ہوں   ۔  ہاں   اللہعَزَّوَجَلَّکے بندوں   میں   سے ایک بندہ ہوں   ۔  اللہعَزَّوَجَلَّ کی رحمت کی اُمید اور اس کے عذاب کا خوف رکھتا ہوں   ۔  اللہعَزَّوَجَلَّ کی قسم !  تم آدمی کے ساتھ اس طرح کرتے رہتے ہو

 

 یہاں   تک کہ اسے ہلاکت تک پہنچادیتے ہو ۔  ‘‘    ( [3] )

حج کے واقعات

 ( 1079 ) … حضرت سیِّدُنا نافع رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہسے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُنا عبداللہبن عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا  حضورنبی ٔپاک ،  صاحب ِلولاک،  سیاحِ افلاکصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی طرح تلبیہ پڑھتے تھے اور اس میں   اپنی طرف سے کچھ اضافہ کرتے ہوئے یوں   کہتے تھے :  

 ’’  لَبَّیْکَ لَبَّیْکَ،   لَبَّیْکَ وَسَعْدَیْکَ،   لَبَّیْکَ وَالْخَیْرُفِیْ یَدَیْکَ،   لَبَّیْکَ وَالرَّغْبَاءُ اِلَیْکَ وَالْعَمَل ‘‘

                ترجمہ :   میں   حاضر ہوں  ،   میں   حاضر ہوں  ،   میں   حاضر ہوں   اور عبادت کے لئے تیار ہوں   ۔  میں   حاضر ہوں   اور بھلائی تیرے اختیار میں   ہے ۔  میں   حاضر ہوں   اور تیری طرف ہی رغبت ہے اور تیرے ہی لئے عمل کرتا ہوں   ۔  ‘‘    ( [4] )

 ( 1080 ) … حضرت سیِّدُناوَبَرَہ بن عبدالرحمن عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰن فرماتے ہیں  کہ میں   ایک مرتبہ حضرت سیِّدُنا عبداللہبن عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا کے ساتھ سفرِحج پرتھا ۔ میں   نے انہیں   یوں   تلبیہ پڑھتے سنا :   ’’ لَبَّیْک لَبَّیْکَ وَالرَّغْبَائُ اِلَیْکَ وَالْعَمَل ‘‘ ترجمہ :   میں   حاضر ہوں  ،   میں   حاضر ہوں   ۔  تیری طرف ہی رغبت ہے اور تیرے ہی لئے عمل کرتا ہوں    ۔  ‘‘    ( [5] )

مقدس مقامات پرمانگی ہوئی دُعا :  

 ( 1081 ) … حضرت سیِّدُنا نافع رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہسے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُنا عبداللہبن عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا ( سعی کرتے ہوئے جب  ) صفا پرچڑھتے تویوں   دعا مانگتے :   

                 ’’  اَللّٰھُمَّ اعْصِمْنِیْ بِدِیْنِکَ وَطَوَاعِیَتِکَ وَطَوَاعِیَۃِ رَسُوْلِکَ،    اَللّٰھُمَّ جَنِّبْنِیْ حُدُوْدَکَ،   اَللّٰھُمَّ اجْعَلْنِیْ مِمَّنْ یُّحِبُّکَ وَیُحِبُّ مَلاَ ئِکَتَکَ وَیُحِبُّ رُسُلَکَ وَیُحِبُّ عِبَادَکَ الصَّالِحِیْنَ،   اَللّٰھُمَّ حَبِّبْنِیْ اِلَیْکَ وَاِلٰی مَلَا ئِکَتِکَ وَاِلٰی رُسُلِکَ وَاِلٰی عِبَادِکَ الصَّالِحِیْنَ،   اَللّٰھُمَّ یَسِّرْنِیْ لِلْیُسْرٰی وَجَنِّبْنِیَ الْعُسْرٰی وَاغْفِرْلِیْ فِی الْآخِرَۃِ وَالْاُوْلٰی

 

 وَاجْعَلْنِیْ مِنْ اَئِمَّۃِ الْمُتَّقِیْنَ،   اَللّٰھُمَّ اِنَّکَ قُلْتَ اُدْعُوْنِیْ اَسْتَجِبْ لَکُمْ وَاِنَّکَ لَا تُخْلِفُ الْمِیْعَادَ،   اَللّٰھُمَّ اِذْ ھَدَیْتَنِیْ لِلْاِسْلَامِ فَـلَا تَنْزَعَنِیْ مِنْہُ وَلَا تَنْزَعَہُ مِنِّیْ حَتّٰی تَقْبِضَنِیْ وَاَنَا عَلَیْہ ‘‘

                ترجمہ :   اے اللہعَزَّوَجَلَّ ! اپنے دین،   اپنی اور اپنے رسول صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمکی طاعت کے ذریعے میری حفاظت فرما ۔  اے اللہعَزَّوَجَلَّ !  مجھے اپنی مقرر کردہ حدود سے تجاوز کرنے سے بچا ۔  



[1]    المصنف لابن ابی شیبۃ ،  کتاب الادب ،  باب فی کف اللسان ،  الحدیث : ۷ ، ج۶ ، ص۲۳۷۔

[2]    جامع معمربن راشدمع المصنف لعبدالرزاق ،  باب اللعن ،  الحدیث : ۱۹۷۰۲ / ۱۹۷۰۳ ، ج۱۰ ،  ص۳۰۔

[3]    جامع معمربن راشدمع المصنف لعبدالرزاق ،  باب المدح ،  الحدیث : ۲۰۶۹۰ ، ج۱۰ ، ص۲۵۰۔

                المدخل الی السنن الکبری للبیھقی ،  باب ما یکرہ لاہل العلمالخ ،  الحدیث : ۵۴۱ ، ص۳۳۴۔

[4]