Book Name:Allah Walon Ki Batain Jild 1

 

پاک پڑھناکیونکر ممکن ہو گا ؟  ‘‘  فرمایا :   ’’ سورۂ اِخلاص  ( یعنی قُلْ هُوَ اللّٰهُ اَحَدٌۚ     )  تہائی قرآن کے برابر ہے ۔  ‘‘    ( [1] )

ظہرتاعصرعبادت :  

 ( 1055 ) … حضرت سیِّدُنا نافعرَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہسے مروی ہے کہ ’’   حضرت سیِّدُنا عبداللہبن عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا ظہرسے عصرتک عبادت میں   مصروف رہتے تھے ۔  ‘‘    ( [2] )

 ( 1056 ) … حضرت سیِّدُناطاؤس رَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہفرماتے ہیں :  ’’ میں   نے حضرت سیِّدُنا عبداللہبن عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا کی طرح کسی کونمازپڑھتے اوران سے زیادہ کسی کواپنا چہرہ،  ہتھیلیاں  اور (  قیام میں   ) پاؤں   قبلہ رُو کرتے نہیں   دیکھا  ۔  ‘‘    ( [3] )

آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کی دُعائیں :

 ( 1057 ) … حضرت سیِّدُنا ابوبُرْدَہ رَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہفرماتے ہیں :  میں   نے حضرت سیِّدُناعبداللہبن عمررَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا کے پہلومیں   کھڑے ہو کر نماز پڑھی ۔  جب آپ سجدے میں   گئے تومیں   نے سناکہ آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہبارگاہِ خداوندی میں   عرض کر رہے تھے :  

             ’’  اَللّٰھُمَّ اجْعَلْکَ اَحَبَّ شَیْئٍ اِلَیَّ وَاَخْشٰی شَیْئٍ عِنْدِیْیعنی :   اےاللہعَزَّوَجَلَّ !  مجھے اپنی سب سے زیادہ محبت اور اپنا سب سے زیادہ خوف عطا فرما ۔  ‘‘  میں   نے انہیں   سجدوں   میں   یہ دُعا کرتے بھی سنا ہے: ’’  رَبِّ بِمَا اَنْعَمْتَ عَلَیَّ فَلَنْ اَکُوْنَ ظَہِیْرًا لِّلْمُجْرِمِیْن ۔ یعنی :   اے میرے پروردگار عَزَّوَجَلَّ !  تیرے فضل واِنعام سے میں   مجرموں   کا ہر گز مددگار نہ بنوں   ۔  ‘‘  اورعاجزی کرتے ہوئے فرمایا :   ’’ اسلام لانے کے بعد میں   نے جو بھی نماز پڑھی،  اس امیدپرپڑھی کہ وہ میرے گناہوں   کاکفارہ بن جائے ۔  ‘‘    ( [4] )

 

صبح کی دُعا :  

 ( 1058 ) … حضرت سیِّدُناعبداللہ بن سَبْرَہ رَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہسے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُناعبداللہ بن عمررَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا صبح کے وقت یوں   دُعاکرتے :   ’’ اَللّٰھُمَّ اجْعَلْنِیْ مِنْ اَعْظَمِ عِبَادِکَ عِنْدَکَ نَصِیْبًافِیْ کُلِّ خَیْرٍتَقْسِمُہُ الْغَدَاۃَ وَنُوْرًا تَھْدِی بِہٖ وَرَحْمَۃً تَنْشُرُھَا وَرِزْقًا تَبْسُطُہٗ وَضَرًّا تَکْشِفُہٗ وَبَلَائً تَرْفَعُہٗ وَفِتْنَۃً تَصْرِفُھَا یعنی :   اےاللہعَزَّوَجَلَّ !  مجھے اپنے عظیم بندوں   میں   سے بنا دے،   ہر اس خیر وبھلائی کا حصہ عطا فرما کر جسے تو صبح اپنے بندوں   میں   تقسیم فرماتا ہے اور نورِ ہدایت،   وسیع رحمت اور کثیر رزق عطا فرما ،   تنگی دور فرما،   پیش آنے والے مصائب کو ٹال دے اور فتنوں   سے نجات عطافرما ۔  ‘‘    ( [5] )

 ( 1059 ) … حضرت سیِّدُناسعید بن مُسَیَّب رَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہ سے راویت ہے کہ ’’   جس دن حضرت سیِّدُنا عبداللہ بن عمررَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَاکاوصال ہوا اس دن رُوئے زمین پر کوئی ایسا شخص نہیں   تھا جو ان جیسا عمل لے کراللہعَزَّوَجَلَّسے ملتا ۔  ‘‘    ( [6] )

آپرَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کاخوفِ خدا

تلاوت کرتے کرتے رونے لگے :  

 ( 1060 ) … حضرت سیِّدُناقاسِم بن ابوبُزَہ رَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہفرماتے ہیں   کہ حضرت سیِّدُنا عبداللہبن عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا سے سننے والے ایک شخص نے مجھے یہ بات بیان کی کہ ایک مرتبہ آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے سورۂ مطففین کی تلاوت شروع کی اور جب اس آیتِ مبارَکہ پر پہنچے:

یَّوْمَ یَقُوْمُ النَّاسُ لِرَبِّ الْعٰلَمِیْنَؕ(۶) ( پ۳۰،   المطففین :  ۶ )

 ترجمۂ کنزالایمان: جس دن سب لوگ رب العالمین کے حضور کھڑے ہوں   گے ۔

            تورونے لگے حتی کہ زمین پرگر گئے اور اس کے بعد قراء ت نہ کر سکے ۔  ‘‘    ( [7] )

 ( 1061 ) … حضرت سیِّدُنانافع رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہسے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُنا عبداللہ بن عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی

 

 



[1]    الزھدللامام احمدبن حنبل ،  اخبارعبداﷲ بن عمر ،  الحدیث : ۱۰۵۴ ، ص۲۰۷۔

[2]    الزھدللاما م احمدبن حنبل ،  اخبارعبداﷲ بن عمر ،  الحدیث : ۱۰۷۲ ، ص۲۱۰۔

[3]    المصنف لعبدالرزاق ،  کتاب الصلاۃ ،  باب السجود ،  الحدیث : ۲۹۴۱ ، ج۲ ، ص۱۱۳۔

[4]    المصنف لابن ابی شیبۃ ،  کتاب الصلاۃ ،  باب فیما یفتح بہ الصلاۃ ،  الحدیث : ۲۱ ، ج۱ ، ص۲۶۳۔

                کتاب الدعاء ،  باب ما ذکرعن ابن عمرمن قولہ ،  الحدیث : ۴ ، ج۷ ، ص۸۷۔

[5]    

Total Pages: 273

Go To