Book Name:Allah Walon Ki Batain Jild 1

کافی ہے کہ وہ اللہ عَزَّوَجَلَّسے ڈرے اوراس کے جھوٹاہونے کے لئے اتناہی کافی ہے کہ وہ کہے :  میں  اللہ عَزَّوَجَلَّسے معافی مانگتاہوں   اور پھر گناہوں   میں   مبتلا ہو جائے  ۔  ‘‘    ( [1] )

حرام کی نحوست :  

 ( 957 ) … حضرت سیِّدُنامالک اَحْمَرِی  عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ الْقَوِی فرماتے ہیں : میں   نے حضرت سیِّدُناحُذَیْفَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کو فرماتے ہوئے سناکہ ’’   شراب بیچنے والا شراب پینے والے کی طرح ہے اور خنزیروں   کی دیکھ بھال کرنے والاخنزیر کھانے والے کی طرح ہے  ۔ اپنے خادموں   کو دیکھو کہ وہ کہاں   سے کماکر لاتے ہیں   ۔ کیونکہ حرام سے پرورش پانے والاکوئی جسم جنت میں   داخل نہیں   ہوگا ۔  ‘‘    ( [2] )

نہ خشوع رہے گانہ نمازوں   کاجذبہ :  

 ( 958 ) … حضرت سیِّدُناحُذَیْفَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کے بھتیجے حضرت سیِّدُنا عبدالعز یز عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ الْعَزِیْز فرماتے ہیں : میں   45سال سے حضرت سیِّدُناحُذَیْفَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کو یہ فرماتے سن رہا ہوں   کہ ’’  دین میں   سے سب سے پہلے خشوع جاتا رہے گااورسب سے آخر میں   لوگوں   میں   نمازمیں   سستی ظاہر ہوگی ۔  ‘‘    ( [3] )

منافق کون ہے ؟

 ( 959 ) … حضرت سیِّدُناابویحییٰرَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہ سے مروی ہے کہ کسی نے حضرت سیِّدُناحُذَیْفَہرَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ سے منافق کے بارے میں   پوچھا تو آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ نے فرمایا :   ’’ منافق وہ ہے جو اسلام کی تعریف تو کرے لیکن اس پر عمل پیرانہ ہو ۔  ‘‘    ( [4] )        

سیِّدُناحُذَیْفَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کی وفات کے واقعات :  

 ( 960 ) … حضرت سیِّدُناعبداللہ بن عباس رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَاکے خادِم حضرت سیِّدُنازِیاد عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ الْجَوَاد سے روایت ہے کہ حضرت سیِّدُناحُذَیْفَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کے مرض الموت میں   وہاں   موجودایک شخص نے بتایا کہ حضرت سیِّدُناحُذَیْفَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ نے فرمایا :  ’’  اگرآج کادن میرے لئے دنیا کا آخری اور آخرت کا پہلا دن نہ ہوتاتو میں   کوئی بات نہ کرتا ۔  ( پھر عرض کی :   ) اے پَرْوَرْدْگارعَزَّوَجَلَّ ! بے شک تو جانتا ہے کہ میں  غربت وناداری کو مالداری پر،  ذلت کو عزت پراور موت کو زندگی پر ترجیح دیتاہوں   ۔ حبیب فقرکی حالت میں   آیاہے ۔ جوپشیمان ہوگاوہ کامیاب نہیں   ہوگا ۔  ‘‘ پھرآپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کاوصال ہوگیا ۔  ‘‘    ( [5] )

 ( 961 ) … حضرت سیِّدُناحسنرَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہسے مروی ہے کہ جب حضرت سیِّدُناحُذَیْفَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کی وفات کا وقت قریب آیاتوانہوں   نے فرمایا :  ’’ حبیب فقرکی حالت میں   آیاہے ۔ جوپشیمان ہوگاوہ کامیاب نہیں   ہوگا ۔  میں  اللہ عَزَّوَجَلَّکی حمدبجالاتاہوں  جس نے مجھے فتنے کے پھیلنے اوراس میں   مبتلاہونے سے پہلے ہی اپنے پاس بلالیا ۔  ‘‘   ( [6] )

قیمتی کفن خریدنے سے منع فرمادیا :  

 ( 962 ) … حضرت سیِّدُناابو وَائِل رَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہ سے روایت ہے کہ جب حضرت سیِّدُنا حُذَیْفَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کے مرض الموت نے شدت اختیار کی تو قبیلہ ’’ بنو عَبس ‘‘  کے کچھ لوگ ان کے پاس حاضر ہوئے اورمجھے حضرت سیِّدُنا خالد بن رَبِیْع عَبْسِی  عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ الْقَوِی نے بتایا کہ جب ہم حضرت سیِّدُناحُذَیْفَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کے پاس حاضر ہوئے اس وقت آپ مدائن میں   تھے اورآدھی رات کا وقت تھا ۔  آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ نے ہم سے وقت دریافت فرمایا تو ہم نے آدھی رات یا رات کا آخری پہر بتایاتوانہوں   نے فرمایا :  ’’ میں   ایسی صبح سےاللہعَزَّوَجَلَّکی پناہ مانگتا ہوں   جو دوزخ کی طرف لے جانے والی ہو ۔  ‘‘  پھر دریافت فرمایا :   ’’ کیا تم اپنے ساتھ کفن لائے ہو ؟  ‘‘  ہم نے کہا :  ’’ جی ہاں   !  ‘‘ ارشادفرمایا :  ’’  میرے  کفن میں   غلونہ کرنا ( [7] ) ۔ کیونکہ اگر تمہارے رفیق کے لئے اللہعَزَّوَجَلَّکے ہاں   خیرو بھلائی ہے تو یقینا اس کا کفن اس سے بہتر کپڑوں   سے بدل دیا جائے گا ورنہ یہ کفن بھی چھین لیا جائے گا ۔  ‘‘  ( [8] )

  ( 963 ) … حضرت سیِّدُناابو مسعودرَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ سے روایت ہے کہ حضرت سیِّدُناحُذَیْفَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کاکفن لایاگیا اس وقت وہ میرے ساتھ ٹیک لگائے ہوئے تھے ۔  پھرایک نیا



[1]    المصنف لابن ابی شیبۃ ،  کتاب الزھد ،  کلام حذیفۃ ،  الحدیث : ۲ ، ج۸ ، ص۲۰۰۔

[2]    الزھدللامام احمدبن حنبل ،  أخبارحذیفۃ بن الیمان ،  الحدیث : ۱۰۰۴ ، ص۱۹۹۔

[3]    المصنف لابن ابی شیبۃ ،  کتاب الزھد ،  کلام حذیفۃ ،  الحدیث : ۱۱ ، ج۸ ، ص۲۰۲۔

[4]    المرجع السابق ،  کتاب الفتن ،  باب من کرہ الخروج فیالخ ،  الحدیث : ۳۰۷ ، ص۶۴۰۔

[5]    موسوعۃ لابن ابی الدنیا ،  کتاب المحتضرین ،  الحدیث : ۳۵۵ ، ج۵ ، ص۳۸۳ ، مفہومًا۔

[6]    موسوعۃ لابن ابی الدنیا ،  کتاب المحتضرین

Total Pages: 273

Go To