Book Name:Siyah Faam Ghulam

تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی خدمتِ سراپا عظمت میں  لے آئے ۔ شَہَنشاہِ خیرُالاَنامصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے اُس سیاہ فام غلام سے مَشکیزہ لے کر اپنا دستِ بابَرَکت مَشکیزے پر پھیرا اورمَشکیزے کا منہ کھول دیا اورفرمایا :                                                                       

’’ آؤ پیاسو!اپنی پیاس بجھاؤ  ۔ ‘‘چُنانچِہ اہلِ قافِلہ نے خوب سیر ہوکر پانی پیا اور اپنے برتن بھی بھرلئے ۔ وہ حبشی غلام یہ مُعجِزہ دیکھ کر نبیوں  کے سرور صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کے دستِ انور چومنے لگا  ۔ سرکارنامدارصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے اپنا دستِ پُرانوار اُس کے چہرے پر پھیردیا ۔                                                                            

شُدسَپَیدآں  زِنگی زادئہ حَبَش

ہَمچوبَدرورَوزِروشن شُدشَبَش

          یعنی اُس حبشی کا سیاہ چہرہ ایسا سفید ہوگیا جیسا کہ چودہویں  کا چاند اندھیری رات کو روزِ روشن کی طرح منوَّر کر دیتاہے  ۔ اُس حبشی کی زَبان سے کلمۂ شہادت جاری ہوگیااوروہ مسلمان ہوگیا اوریوں  اُس کا دل بھی روشن ہوگیا ۔  جب مسلمان ہوکر وہ اپنے مالِک کے پاس پہنچا تو مالِک نے اسے پہچاننے سے ہی انکار کردیا ۔  وہ بولا :  میں  وُہی آپ کاغلام ہوں ۔ مالِک نے کہا : وہ تو سیاہ فام غلام تھا ۔  کہا  : ٹھیک ہے مگر میں  مَدَنی حُضورسراپانورصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  پر ایما ن لاچکا ہوں  ۔ میں  نے ایسے نُورِ مُجسَّمصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی غلامی اختیار کر لی ہے کہ اُس نے مجھے بدرِ مُنیر(یعنی چودھویں  کا روشن چاند) بنا دیا  ، جس کی صُحبت میں  پہنچ کر سب رنگ اُڑ جاتے ہیں  ، وہ تو کفر و معصیَّت کی سیاہ رنگت کو بھی دُور فرما دیتے ہیں  ، اگر میرے چِہرے کا سیاہ رنگ اُڑ گیا تو اِس میں  کون سی تَعَجُّب کی بات ہے ! (مُلَخَّص اَ ز مثنوی شریف مُتَرْجَم، ص۲۶۲ )

جو گدا دیکھو لئے جاتا ہے توڑا نورکا

نور کی سرکارہے کیا اس میں  توڑا نورکا

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !     صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد  

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!دو جہان کے سلطانصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی شانِ عظمت نشان پر میری جان قربان! اللہ اللہ! پہاڑ کے پیچھے گزر نے والے آدمی کی بھی کس شان سے خبر دیں  کہ اُس کا رنگ کالا ہے اور وہ سانڈنی پر سوار ہے اور اُس کے پاس مشکیزہ بھی ہے ، پھر عطائے الہٰی عَزَّ وَجَلَّ  سے ایسا کرم فرمایا کہ مشکیزہ کے پانی نے سارے قافِلے کو کفایت کیا اورمشکیزہ اُسی طرح بھرا رہا ، مزید سیاہ فام غلام کے منہ پر نورانی ہاتھ پھیر کر کالے چہرے کو نو ر نور کر دیا حتّٰی کہ اُس کا دل بھی روشن ہو گیا اورمشرَّف بہ اسلام ہو گیا ۔

  نور والا آیا ہے نو ر لیکر آیا ہے

 



Total Pages: 19

Go To