Book Name:Abu Jahal ki maut

سماسکتی ہے کیونکر حُبِّ دنیا کی ہوا دل میں              بسا ہوجب کہ نقشِ حُبِّ محبوب خدادل میں

محمدکی محَبّت دینِ حق کی شرطِ اوَّل ہے                    اِسی میں ہواگر خامی تو سب کچھ نامکمّل ہے

محمد کی غلامی ہے سَنَدآزاد ہونے کی                    خدا کے دامنِ توحید میں آباد ہونے کی

محمد کی محَبت آنِ ملّت شانِ ملّت ہے                    محمد کی محبت روحِ ملّت جانِ ملّت ہے

محمد کی محَبت خون کے رِشتوں سے بالا ہے               یہ رشتہ دُنیوی قانون کے رِشتوں سے بالاہے

محمد ہے متاعِ عالَمِ ایجاد سے پیارا                                  پِدَر، مادربِرادر مال جاں اولاد سے پیارا

یِہی جذبہ تھا ان مردانِ غیرت مند پر طاری                        دِکھائی جن کے ہاتھوں حق نے باطِل کونِگُوں ساری

مشکل الفاظ کے معانی

شقاوت : بد بختی ۔ حلاوت : مٹھاس ۔ غَزا :  جنگ ۔ رُخوں کا غازہ : چہروں کا پوڈر ۔ دائمی :  ہمیشہ رہنے والی ۔  زندۂ جاوِید :  ہمیشہ زندہ رہنے والا ۔ تمہید :  کسی بات کا آغاز ۔ دارِ فانی : ختم ہونے والی دنیا ۔ تابِندہ :  روشن ۔ پاک طِینت :  نیک فطرت ۔ دنیا کی ہوا :  دنیا کی ہَوَس ۔  ملّت :  قوم ۔ مَتاع :  دولت ۔ پِدَر :  باپ ۔ مادر : ماں  ۔ بِردار : بھائی ۔ نِگُوں سار :  شرم سے سر جُھکائے ہوئے ۔

حیرت انگیز جذ بے کاراز

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!یہ عزمِ مُحکَم، یہ باطِل سے ٹکراجانے کاوالِہانہ شوق، خداومصطَفے صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کانامِ پاک بلندکرنے کی تڑپ، یہ بے خَوفی اوربہادُری انہیں کہاں سے ملی؟یقینایہ سباللہ و رسول اللہ  عَزَّ وَجَلَّ و صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کیمَحَبَّت اور اُن دُعاؤں کا ثَمَر (یعنی نیتجہ)ہے جو لَب مصطَفٰے صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ سے نکلیں  ۔ چُنانچِہ امام بَیْہَقِی رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ نَقْل کرتے ہیں : حضرتِ علیُّ المرتضی، شیرِخدا کَرَّمَ اللہُ تَعَالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْم نے فرمایا : ’’بَدرکے روزہم میں سے حضرتِ مِقداد رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کے علاو ہ کوئی سُوار نہ تھاوہ اَبْلَق(یعنی چتکبرے ) گھوڑے پرسُوار تھے ، اُس رات سب سورہے تھے ، مگر اللہ  عَزَّ وَجَلَّ کے محبوب صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ ساری رات نَفْل پڑھتے رہے اور روتے رہے ۔ ‘ ‘(دَلائِلُ النُّبُوّۃ ج۳ ص۴۹) سُبْحٰنَ اللہ عَزَّ وَجَلَّاشکوں کی زَبانی فتح ونُصرت کیلئے جودعائیں مانگی گئی ہونگی ان کی قَبولیت کاکیا عالَم ہوگا!

فِرشتوں کے ذَرِیعے مدد

        امیرُالْمُؤمِنِین، امام العادِلین، حضرتِ سیِّدُنا عمرفاروقِ اعظم رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ فرماتے ہیں : بدرکے روز سرکا رِ دو عالم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ قِبلہ رُوکھڑے ہوگئے اوراپنے دونوں ہاتھ بارگاہِ الٰہی جَلَّ جَلَالُہٗ میں پھیلادئیے اوراپنے پَرْوَرْدَگار عَزَّ وَجَلَّ سے فریادشروع کردی یہاں تک کہ مَحوِیَّت(یعنی استِغراق) کے عالَم میں آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے مبارَک کندھے سے چادرِپاک زمین پر تشریف لے آئی، سیِّدُنا صِدّیقِ اکبر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ تیزی سے آئے اور چادرشریف اٹھاکر سلطانِ بحروبر صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے مبارَک کندھے پرڈالدی، پھروالِہانہ انداز میں پیچھے سے سرکارِ مدینہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کوسینے سے لگالیا اورعرض کی : آقا



Total Pages: 14

Go To