Book Name:Sharah Shajra Shareef

(۱) تلفظ کی درستگی کے لئے بزرگانِ دین علیہم رحمۃاللہ  المبین کے ناموں اور مشکل الفاظ پر اعراب لگائے گئے ہیں کیونکہ کم پڑھے لکھے اسلامی بھائی اور اسلامی بہنیں عقیدت میں شجرہ عالیہ تو پڑھتے ہیں مگر الفاظ کی ادائیگی میں عموماًغلطیاں کرتے ہیں اور بزرگوں کے نام بھی ٹھیک سے نہیں پڑھ پاتے ۔

 (۲) مشکل الفاظ کے معانی بیان کردئیے گئے ہیں ۔

 (۳) اہلِ ذوق کی تسکین کے لئے اس شعر کی ادبی خُوبی کو وضاحت کے عنوان سے بیان کیا گیا ہے ۔

 (۴) شعر میں ذکر کردہ بزرگ کا مختصر تعارُف بھی پیش کیا گیا ہے ۔جس کے لئے زیادہ تراِن کتب ورسائل سے مدد لی گئی ہے؛(1)سیرتِ مصطفی صَلَّی اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  از علامہ عبدالمصطفٰی اعظمی رحمۃ اللہ  علیہ (2)صبح بہاراں (3)امام حسین رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُکی کرامات(4) مدینہ شریف سے بریلی تک(5) تذکرہ امام احمد رضا رحمۃ اللہ  علیہ (6)سیدی قطبِ مدینہ رحمۃ اللہ  علیہ،  از :  امیراہلسنّت مدظلہ العالی(7) تذکرۃ الاولیاء  از :  حضرت فرید الدین عطّار رحمۃ اللّٰہ علیہ (8)روض الریاحین  از :  علامہ یافعی رحمۃ اللّٰہ علیہ (9)تذکرۂ مشائخ قادریہ از :  مولانا عبدالمجتبٰی رضوی قدس سرہ  (10)تعارفِ امیر اہلسنّت از :  المدینۃ العلمیۃ     

شَجَرَۂ عالِیّہ

حضراتِ مشائخِ کرام سلسلہ مبارکہ قادِریہ رضویہ ضیائیہ عطّاریہ

یاالٰہی رحم فرما مصطفٰے [1] کے واسِطے

یارسول اللہ  کرم کیجیے خدا کے واسِطے

مشکلیں حل کر شہِ مشکل کشا کے واسِطے

کر بلائیں رد شہید کربلا کے واسِطے

سیِّدِ سجاد کے صدقے میں ساجد رکھ مجھے

علم حق دے باقر علم ہُدٰی کے واسِطے

صدقِ صادِق کا تَصَدُّق صادِقُ الاسلام کر

بے غضب راضی ہو کاظم اور رضا کے واسِطے

بہر معروف و سری معروف دے بے خود سری

جُندِ حق میں گِن جنید باصَفا کے واسِطے

بہر شبلی شیر حق دُنیا کے کتوں سے بچا

ایک کا رکھ عبد واحِد بے رِیا کے واسِطے

بُوالفَرَح کا صدقہ کر غم کو فَرَح دے حُسن و سعد

بُو الحسن اور بُوسعید سعد زا کے واسِطے

قادِری کر قادِری رکھ قادِریوں میں اُٹھا

قدرِ عبدُالقادِرِ قدرت نُما کے واسِطے

اَحْسَنَ اللّٰہُ لَہُمْ رِزْقاً سے دے رزقِ حَسن

    بندہ ٔ  رزَّاق  تاجُ  الاصفیا  کے  واسِطے

نصراَبی صالح کا صدقہ صالح و منصور رکھ

دے حیاتِ دین مُحِیّ جانفزا کے واسِطے

طُورِ عِرفان و عُلُوّ و حمد و حسنٰی و بَہا

دے علی موسیٰ حسن احمد بہا کے واسِطے

    بہر ابراھیم مجھ پر نارِ غم گلزار کر                                                       

بھیک دے داتا بھکاری بادشا کے واسِطے

خانۂ دل کو ضیا دے رُوئے ایماں کو جمال

شہ ضیا مولیٰ جمال الاولیا کے واسِطے

دے محمد کے لیے روزی کر احمد کے لیے

خوانِ فضل اللہ  سے حصہ گدا کے واسِطے

دِین ودُنیاکے مجھے بَرَکات دے بَرَکات سے

عشقِ حق دے عشقی عشقِ اِنتِمَا[2]کے واسِطے

 



     یعنی اللہ تعالیٰ نے اُنہیں اچھی روزی عطا فرمائی ۔ [1]

     یعنی عشق کی نسبت رکھنے والے۔  [2]



Total Pages: 64

Go To