Book Name:Jannat ki Tayyari

اپنے ربّ سے بخشوانا ساتھ جنت میں بسانا

یَانَبِی سَلَامٌ عَلَیْکَ   صَلَوَاتُ اللّٰہِ عَلَیْکَ

(مغیلان ِ مدینہ از امیر اہلسنت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ)

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !           صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

        پابند ِصوم و صلوٰۃ و سنّت، امیر ِاہلسنّت  دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  مدنی انعام نمبر 57میں ارشادفرماتے ہیں : کیا آپ نے اِس ہفتے کم از کم ایک اسلامی بھائی کو مکتوب روانہ فرمایا؟ (مکتوب میں مدنی قافلے اور مدنی انعامات وغیرہ کی ترغیب دِلائیں )

            میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! مکتوب والے اس مدنی انعام کے ذریعے ہم بآسانی بہتر انداز سے عیادت و تعزیت کی سعادت پا سکتے ہیں ۔

        خیر خواہی کے مدنی جذبے سے سرشار، بھٹکے ہوؤں کے رہبر و غمخوار، شیخِ طریقت، امیر ِاہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  بذریعہ مکتوب کس طرح تعزیت فرماتے ہیں ، آئیے! آپ کا ایک تعزیتی مکتوب مِن و عَن ملاحظہ فرمائیے :     

بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ سگِ مدینہ محمد الیاس عطار قادری رضوی عُفِیَ عَنْہُ کی جانب سے لواحقینِ مرحوم محمد شان عطاری عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ البَارِی  کی خدماتِ عالیہ میں مَدَنی مٹھاس سے تربتر سلام ، السّلام علیکم ورحمۃ اللّٰہ و بَرَکاتہ الحمد للّٰہ ربّ العٰـلمین علٰی کُلّ حالمعلوم ہوا کہ محمد شان عطاری حادثے میں وفات پا گئے ہیں ۔اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ   مرحوم کو غریقِ رحمت کرے ، ان کی قبر پر رحمت و رضوان کے پھول برسائے ، ان کی قبر اور مدینے کے تاجور صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ    کے روضَۂ انور کے درمیان جتنے پردے حائل ہیں سب اُٹھاکر مرحوم کو رحمتِ عالم ، نورِ مجسَّم ، شاہِ بنی آدم ، رسولِ مُحْتَشَم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کے جلووں میں گمادے۔ مرحوم کی مغفرت فرماکر انہیں جنّتُ الفردوس میں مَدَنی حبیب صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ    کا پڑوس نصیب فرمائے اور مرحوم کے لواحقین کو صبرِ جمیل اور صبرِ جمیل پر اجرِجَزیل مرحمت فرمائے۔           

اٰمین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمینصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  

عجب سرا ہے یہ دنیا یہاں پہ شام و سحر

کسی کی کُوچ کسی کا قیام ہوتا ہے

        افسوس! سگِ مدینہ اپنے آپ کو نیکیو ں سے دُور اور گناہوں سے بھرپور پاتا ہے ۔ہاں ، ربِّ غفور  عَزَّ وَجَلَّ  اس امر پر قادر ضَرور ہے کہ گناہ و قُصُور کو نیکیوں سے بدل دے ۔لہٰذا خدائے مجید سے یہی اُمّید ہے کہ وہ مجھ پاپی و بدکار کے گناہوں کو اپنے پیارے حبیب صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ    کے صدقے ضَرور نیکیوں سے بدل دے گا اور اِسی امّید  پر میں اپنی زندگی کی تمام تر نیکیاں بارگاہِ مُصطفوی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ    میں نذر کرکے’’ مرحوم محمد شان عطاری ‘‘ کی نذر کرتا ہوں ۔

        عجب نیرنگیٔ دنیا ہے کہ ایک طرف کسی کا جنازہ اُٹھایا جارہا ہے جبکہ دوسری طرف کسی کو دولہا بنایا جارہا ہے۔ایک طرف خوشی کے شادیانے بج رہے ہیں تودوسری طرف کسی کی میّت پر آہ و فُغاں کا شور ہے۔

نسیمِ صبح گُلشن میں گُلوں سے کھیلتی ہوگی

کسی کی آخِری ہچکی کسی کی دل لگی ہوگی

         مرحوم محمد شان عطاری کے ایصالِ ثواب کی خاطر گھر کا ہر مرد (جس کی عمر بیس سال سے زائد ہو ) کم از کم ایک بار دعوتِ اسلامی کے تین روزہ مَدَنی قافِلے کے ساتھ ضَرور سفر اختیارکرے ۔ اپنے شہر میں ہونے والے دعوتِ اسلامی کے ہفتہ وار سنّتوں بھرے اجتماع میں شرکت کی سبھی کی خدمت میں مَدَنی التجاء ہے۔   

جہاں میں ہیں عبرت کے ہر سُو نمونے       مگر تجھ کو اندھا کیا رنگ و بو نے

کبھی غور سے یہ بھی دیکھا ہے تو نے         جو آباد تھے وہ مکاں اب ہیں سونے

جگہ جی لگانے کی دنیا نہیں ہے

یہ عبرت کی جا ہے تماشہ نہیں ہے

والسلام مع الاکرام

                                                                                                                                ۳۰    محرم الحرام ۱۴۲۸ھ

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !             صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ   سے ڈرنا اور حُسنِ اَخْلاق

             حضرت ِ سَیِّدُ نَااَبُوہُرَیْرَہ  رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ   فرماتے ہیں کہنُوْرِ مُجَسَّم، رَسُوْلِ مُحْتَشَمصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  سے لوگوں کو کثرت سے جَنّت میں داخِل کرنے والے عمل کے بارے میں سُوال کیاگیا تو آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے فرمایاکہ’’  اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ  سے ڈرنا اور حُسْنِ اخلاق ۔‘‘ پھر رسول اللہ  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  سے کَثْرت سے جہنم میں داخِل کرنے والی چیز کے بارے میں سُوال کیا گیا تو آپ  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایاکہ’’ منہ اور شرمگاہ۔‘‘(الاحسان بترتیب صحیح ابن حبان، کتاب البر والاحسان ، باب حسن الخلق، حدیث ۴۷۶، ج۱، ص ۳۴۹)

   

 



Total Pages: 31

Go To