Book Name:Uyun ul Hikayaat Hissa 1

سب کی آنکھ کھلی تو سب حیران ہوکر ایک دوسرے سے کہنے لگے :’’ رات تو ہم نے عجیب وغریب خواب دیکھا ہے ۔‘‘پھرسب نے اپنا اپنا خواب بیان کیا ،بڑا بھائی کہنے لگا :’’یہ محض ایک جھوٹا خواب ہے، اس کی کوئی حقیقت نہیں ، لہٰذا اسے ذہن سے نکال دو۔‘‘ چھوٹے بھائی نے کہا : ’’میں اس کی ضرورتحقیق کرو ں گا اورضرور اس جگہ کو کھود کر دیکھو ں گا ۔‘‘

            چنانچہ وہ تینوں بھائی اسی مکان میں پہنچے اور جب اس جگہ کو کھود ا جس کی شیطان نے نشاندہی کی تھی تو وہ یہ دیکھ کر حیران رہ گئے کہ وہاں ان کی بہن اور ایک بچہ ذبح شدہ حالت میں موجود ہیں۔ چنانچہ وہ اس بد بخت عا بد کے پاس پہنچے اور اس سے پوچھا: ’’ سچ سچ بتا تُو نے ہماری بہن کے ساتھ کیا کیا ہے ؟ ‘‘عا بد نے جب ان کا غصہ دیکھا تو اپنے گناہ کا اعتراف کرلیا اور سب کچھ بتا دیا۔ چنانچہ وہ تینوں بھائی اسے پکڑ کر بادشاہ کے دربار میں لے گئے، بادشاہ نے ساری بات سن کر اسے پھانسی کا حکم دے دیا ۔

            جب اس بدبخت عابد کو پھانسی دی جانے لگی تو شیطان مردو د اپنا آخری وار کرنے پھر اس کے پاس آیا اور اسے کہا:’’ میں ہی تیرا وہ ساتھی ہوں جس کے مشوروں پر عمل کر کے تو عورت کے فتنے میں مبتلا ہوا ،پھر تُو نے اسے اور اس کے بچے کوقتل کر دیا، ہاں ! اگر آج تُو میری بات مان لے گا تو میں تجھے پھانسی سے رہائی دلوا دو ں گا۔‘‘ عا بد نے کہا: ’’اب تومجھ سے کیا چاہتا ہے؟ ‘‘شیطان لعین بولا: ’’تُواللہ عزوجل  کی وحدانیت کا اِنکار کردے اور کافر ہوجا،اگر تُوایسا کرے گا تو میں تجھے آزاد کرو ا دوں گا ۔‘‘یہ سن کر کچھ دیر تو عا بد سوچتا رہا لیکن پھر دنیاوی عذاب سے بچنے کی خاطر اُس نے اپنی زبان سے کفر یہ کلمات بکے اور اللہ عزوجل  کی وحدانیت کا منکر ہوگیا (والعیاذ باللہ تعالیٰ) ۔جب شیطان ملعون نے اس بدبخت عابد کا ایمان بھی بر باد کروا دیاتو اُسے حالتِ کفر میں پھانسی دے دی گئی اور وہ فوراََاپنے ساتھیوں سمیت وہاں سے غائب ہوگیا۔‘‘

            شیطان کی شیطانیت کے بارے میں قرآن کریم بیان فرماتا ہے :         

 کَمَثَلِ الشَّیْطٰنِ اِذْ قَالَ لِلْاِنْسَانِ اکْفُرْج فَلَمَّا کَفَرَ قَالَ اِنِّیْ بَرِیْٓئٌ مِنْکَ اِنِّیْٓ اَخَافُ اللہَ رَبَّ الْعٰلَمِیْنَ0        ۲۸، الحشر: ۶ ۱)

ترجمۂ کنزالایمان: شیطان کی کہاوت جب اس نے آدمی سے کہا کفر کر پھر جب اس نے کفر کرلیا بولا میں تجھ سے الگ ہوں میں اللہ سے ڈرتا ہوں جو سارے جہان کا رب۔ 

  (تفسیر القرطبی، سورۃ الحشر، تحت الآیۃ:۱۶، الجزء الثامن عشر،جلد۹،ص۳۰تا۳۲)

(اے ہمار ے پروردگار عزوجل!عورت کے فتنوں اور شیطان کی مکاریوں سے ہما ری حفاظت فر ما، ہمیں دنیوی اور اُخروی ذلت ورسوائی اور عذاب سے محفوظ  فرما، ہما ری عصمتو ں اور ہمارے ایمان کی حفاظت فرما ،اے اللہعزوجل!ہم تیری ہی عطاسے مسلمان ہیں ،تجھے تیرے پیارے حبیب صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّم کا واسطہ! ہمارا خاتمہ بالخیر فرما)


 

 



Total Pages: 412

Go To