Book Name:Uyun ul Hikayaat Hissa 1

اندھے ہوچکے ہیں اور ان کے ہاتھ بھی بالکل بے کار ہوچکے ہیں۔

            جب یہ خبر اس دور کے نبی علیہ السلام  کو پہنچی تو انہوں نے اللہ عزوجل  کی بارگاہ میں ان دونوں کے بارے میں عرض کی تو بارگاہِ خداوندی عزوجل  سے ارشاد ہوا : ’’مَیں ہر گز ان دونوں کو معاف نہیں کرو ں گا، کیا انہوں نے یہ گمان کرلیا کہ جو حرکت انہوں نے لکڑہارے کے ساتھ کی میں اس سے بے خبر ہوں۔‘‘

            (اے ہمارے اللہ عزوجل ! ہمیں اپنے عذاب سے محفو ظ رکھ اور ہمیں دنیا اور عورت کے فتنے سے محفوظ رکھ ،ہماری خطاؤں کو اپنے فضل وکرم سے معاف فرما، دنیا کی محبت سے بچا کر اپنے پیارے حبیب صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّمکے عشق حقیقی کی دولت سے مالامال فرما۔ آمین بجاہ النبی الامین صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّم)

؎دل عشقِ محمد میں تڑپتا رہے ہر دم                                               سینے کو مدینہ میرے اللہعزوجلبنادے (آمین)

 

 

۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷

حکایت نمبر90:                             

شیطان کا جال

            حضرت سیدنا عبد الرحمن بن زیاد بن انعم علیہ رحمۃ اللہ الا کرم فرماتے ہیں : ’’ایک مرتبہ حضرت سیدنا موسیٰ علیٰ نبینا وعلیہ الصلوٰۃ والسلام  محفل میں تشریف فرما تھے کہ ابلیس ملعون آپ علیہ السلام کے پاس آیا ،اس نے اپنے سرپر مختلف رنگوں والی بڑی سی ٹوپی پہن رکھی تھی، ابلیس آپ (علیہ السلام) کے قریب آیا اوررنگین ٹو پی اُتا ر کر آپ علیہ السلام  کے سامنے رکھ دی ، پھر کہنے لگا:اے موسیٰ (علیہ السلام)  ! آپ پر سلامتی ہو۔

            حضرت سیدناموسیٰ علیٰ نبینا وعلیہ الصلوٰۃوالسلام نے اس سے پوچھا :’’ تُوکون ہے ؟‘‘ اس نے کہا: ’’میں ابلیس ہوں۔‘‘ آپ علیٰ نبینا وعلیہ الصلوٰۃوالسلام نے یہ سن کر فرمایا:’’ تُو ابلیس ہے، اللہ تعالیٰ تجھے سلامتی نہ دے بلکہ بر باد کرے، تُو میرے پاس کیوں آیا ہے ؟‘‘ اس لعین نے جواب دیا :’’ اللہ عزوجل  کی بارگاہ میں آپ(علیہ السلام) کا مقام بہت بلند وبر تر ہے، آپ (علیہ السلام) اللہ عزوجل  کے برگُزِیدہ پیغمبر ہیں ، مَیں اسی لئے آپ کی بارگاہ میں سلام عرض کرنے آیا ہوں۔

             آپ علیٰ نبینا وعلیہ الصلوٰۃوالسلام نے پوچھا:’’یہ مختلف رنگوں والی ٹوپی کیا ہے اور تُو نے یہ کیوں پہن رکھی ہے ؟‘‘ ابلیس نے جواب دیا:’’ یہ میرا جال ہے، میں اس کے ذریعے لوگو ں کے دِلوں کو شکار کرتا ہوں ، انہیں اپنے جال میں پھنساتا ہوں اور ان پر


 

 



Total Pages: 412

Go To