Book Name:Uyun ul Hikayaat Hissa 1

پر گر پڑا، میں کافی دیر بے ہوش رہا، پھر سورج کی تیز دھوپ کی وجہ سے مجھے ہوش آیا ،میں نے اپنا سر اٹھا کر دیکھا تو بڑا حیران ہوا کہ اب میرے سامنے نہ تو کوئی درخت ہے نہ جھونپڑی اور نہ ہی وہ نوجوان۔ یہ سب چیزیں نہ جانے کہا ں غائب ہوگئیں ،میں کافی دیر اسی طرح حیران وپریشان وہاں کھڑا رہا، اس نوجوان کی باتیں اب تک میرے دل ودماغ میں گھوم رہی ہیں ، پھر میں اپنے سفر پر روانہ ہوگیا۔

{اللہ عزوجل کی اُن پر رحمت ہو۔۔اور۔۔ اُن کے صدقے ہماری مغفرت ہو۔آمین بجاہ النبی الامین صلی اللہ تعالی علیہ وسلم}

 

            (اے ہمارے پاک پروردگار عزوجل! ہمیں بھی ہر وقت اپنے جلووں میں گم رہنے کی توفیق عطا فرما ، فکر دنیا سے بچا کر فکر آخرت نصیب فرما ، اوراپنی محبت کا ایسا جام پلا کہ ہم ہروقت تیرے جلووں میں ایسے گم ہو جائیں کہ ہمیں اپنا بھی ہوش نہ رہے)

؎؎ محبت میں اپنی گما یا الہٰی عزوجل !

نہ پاؤں میں اپنا پتا یا الہٰی عزوجل !

 

 

۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷

حکایت نمبر83:                                            

مال کاوبال

            حضرت سیدنا جریرعلیہ رحمۃ اللہ القدیرحضرت سیدنا لیثرحمۃ اللہ تعالیٰ علیہسے روایت کرتے ہیں :’’ ایک مرتبہ حضرت سیدنا عیسیٰ علیٰ نبینا وعلیہ الصلوٰۃوالسلام سفر پر روانہ ہوئے، راستے میں ایک شخص ملا، اس نے عرض کی :’’ حضور! مجھے بھی اپنی بابرکت صحبت میں رہنے کی اجازت عطافرمادیں ،میں بھی آپ علیہ السلام کے ساتھ سفر کرنا چاہتا ہوں۔‘‘ آپ علیہ السلام نے اسے اپنی ہمراہی کی اجازت عطا فرمادی اور دونوں ایک ساتھ سفر کرنے لگے۔ راستے میں ایک پتھر کے قریب آپ علیہ السلام نے فرمایا : ’’آؤ ہم یہاں کھانا کھالیتے ہیں۔‘‘ چنانچہ دونوں کھاناکھانے لگے، آپ علیہ السلام کے پاس تین روٹیاں تھیں ، ایک ایک روٹی دونوں نے کھالی، اور تیسری رو ٹی بچی رہی۔ آپ علیہ السلام رو ٹی کو وہیں چھوڑکرنہر پر گئے اور پانی پیا، پھر جب واپس آئے تو دیکھا کہ رو ٹی غائب ہے، آپ علیہ السلام نے اس شخص سے پوچھا:’’ تیسری روٹی کہا ں گئی ؟ اس نے کہا:مجھے معلوم نہیں ،پھر آپ علیہ السلام نے فرمایا:’’ آؤ ہم اپنے سفر پر چلتے ہیں۔‘‘ وہ شخص اٹھا اور آپ علیہ السلام کے ساتھ چلنے لگا، راستے میں ایک ہرنی اپنے دو خوبصورت بچو ں کے ساتھ کھڑی تھی، آپ علیہ السلام نے ہرنی کے ایک بچے کو اپنی طرف بلایا تو وہ آپ علیہ السلام کا حکم پاتے ہی فوراً حاضر خدمت ہوگیا،


 

 



Total Pages: 412

Go To