Book Name:Khanay ka Islami Tariqa

ترجَمہ: تمام تعریفیں اللہ تعالیٰ کے لیے ہیں جس نے مجھے یہ کھاناکِھلایا اور میری کسی مَہارت وقُوّت کے بِغیر مجھے یہ رِزق عطا فرمایا  ۔ ‘‘ (سنن ترمِذی ج۵ ص ۲۸۴  دار الفکر بیروت)

(60)کھانے کے بعد یہ دُعا بھی پڑھئے -:

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ الَّذِیْ اَطْعَمَنَا وَسَقَانَاوَجََعَلَنَا  مُسْلِمِیْنَ ۔

ترجَمہ :اللہعَزَّوَجَلَّ  کا شکر ہے جِس نے ہمیں کِھلایا ، پِلایا اور ہمیں مُسلمان بنایا ۔

            ( سنن ابوداوٗد ج۳ص۵۱۳ حدیث ۳۸۵۰ دار احیاء التراث العربی بیروت)

(61)اگر کِسی نے کِھلایا ہو تو یہ دُعا بھی پڑھئے :  ۔

اَللّٰھُمَّ اَطْعِمْ مَنْ اَطْعَمَنِیْ وَ اسْقِ مَنْ سَقَانِیْ  ۔

ترجمہ: اے اللہ عَزَّوَجَلَّاُس کو کِھلا جس نے مجھے کِھلایا اور اُس کو پِلا جِس نے مجھے پِلایا ۔ ( الحصن الحصین ص ۷۱ المکتبۃ العصریۃ، بیروت )

 (62)کھانا کھانے کے بعد یہ دُعا بھی پڑھئے : ۔

            اَللّٰھُمَّ بَارِکْ لَنَافِیْہِ وَاَطْعِمْنَاخَیْرًامِّنْہُ ۔         

ترجمہ : اے اللہ عَزَّوَجَلَّ ! ہمارے لئے اِس کھانے میں بَرَکت عطا فرما اور اِس سے بِہتر کھانا ہمیں کِھلا ۔  ( سنن ابوداوٗد  ج۳ص ۴۷۵حدیث  ۳۷۳۰)

(63) دُودھ پینے کے بعد یہ دُعا پڑھئے : ۔

اَللّٰھُمَّ بَارِکْ لَنَافِیْہِ وَزِدْنَامِنْہُ ۔    (ایضاً)

ترجَمہ:اے اللہ عَزَّوَجَلَّ !ہمارے لئے اِس میں بَرَکت دے اور ہمیں اِس سے زیادہ عِنایت فرما ۔

  (64)سرکارِ مدینہ  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کو حَلوا، شہد ، سِرکہ ، کھجور، تربُوز، ککڑی اور لوکی (کدُّو شریف)بَہُت پسند تھے ۔

 (65)اللہ کے محبوب  عَزَّوَجَلَّو  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کو بکرے کے گوشْتْ میں دَسْت (بازُو) گردن اور کمر کا گوشْت مَرغوب تھا  ۔

(66)آقائے مدینہ  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کبھی کبھی کَھجور اور تَربُوز یا کَھجور اور ککڑی یا کَھجوراور روٹی مِلاکر تَناوُل فرماتے تھے ۔

(67)کُھرچَن سرکارِ مدینہ  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کو پسند تھی ۔

(68)ثَرِیْد یعنی سالن کے شَوربے میں بِھگوئی ہوئی روٹی کے ٹکڑے سرکارِ مدینہ  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کو بَہُت پسند تھے ۔

(69)ایک اُنگلی سے کھانا شیطان کااور دو اُنگلیوں سے کھانا مَغرُوروں کا طریقہ ہے تین انگلیوں سے کھانا سُنَّتِ انبیاء علیہم السلام ہے  ۔

کتنا کھائے ؟

(70)بُھوک کے تین حِصّے کرنا بہتر ہے  ۔ ایک حصّہ کھانا، ایک حِصّہ پانی اور ایک حِصّہ ہوا ۔ مَثَلاً تین روٹی میں سَیر ہوجاتے ہیں تَو ایک روٹی کھایئے ایک روٹی جتنا پانی اور باقی ہوا کیلئے خالی چھوڑدیجئے  ۔ اگر پَیٹ بھرکر بھی کھا لیا تو مُباح ہے کوئی گُناہ نہیں ۔ مگر کم کھانے کی دینی و دُنیوی بَرَکتیں مرحبا! تجرِبہ کر کے دیکھ لیجئے ۔ اِن شاءاللّٰہ عَزَّوَجَلّ پیٹ ایسا دُرُست ہو جائے گا کہ آپ حیران رہ جائیں گے ۔ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ ہم سب کو پیٹ کا قفلِ مدینہ نصیب فرمائے ۔ یعنی حرام سے بچنے اور حلال کھانا بھی ضَرورت سے زیادہ کھانے سے بچائے ۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  

           قَیْلُوْلہ سنّت ہے

(71) دوپَہَر کے کھانے کے بعد قَیْلُوْلہ کیجئے ، دوپہر کے وقت لیٹنے کو قَیْلُوْلہ کہتے ہیں اور یہ خُصُوصاً رات کو عبادت کرنے والوں کے لئے سنَّت ہے کہ اس سے رات کی عبادت میں آسانی ہو جاتی ہے ۔  شام کو کھانے کے بعد کم ازکم 150 قدم چلئے ۔ شام کے کھانے کے بعد مطلقاً ٹہلنا بہتر ہے اور یہ ڈیڑھ سو قدم چلنے کا قول اَطِبَّاء کا ہے ۔

(72)کوئی بھی چیزکھانے یا پینے کے بعد اَلحمدُلِلّٰہ  ضَرور کہئے ۔

(73)دسترخوان اٹھائے جانے سے پہلے مت اُٹھئے ۔

(74)کھانے کے بعد ہاتھ صابون سے اچّھی طرح دھو کر پونچھ لیجئے ۔

(75)کاغَذ سے ہاتھ پُونچھنا مَنْع ہے ۔

(76)تَولیہ سے ہاتھ پُونچھ سکتے ہیں  ۔ پہنے ہوئے کپڑے سے ہاتھ مت پُونچھئے ۔ میرے آقا اعلیٰ حضرت، اِمامِ اَہلسنّت، مولیٰناشاہ امام اَحمد رضا خانعَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰن  اہلِ تجرِبہ کا قول نَقل کرتے ہوئے فرماتے ہیں : دامن ( یا آنچل)سے ہاتھ منہ پونچھنا بھول پیدا ( یعنی حافظہ کمزور ) کرتا ہے ۔ ( فتاویٰ رضویہ جلد اوّل حصہ اوّل ، ص ۳۳۱ رضا فاؤ نڈیشن) پہنے کے لباس یا عمامہ سے چکنے یا بدبودار ہاتھ پونچھنا  جائز



Total Pages: 7

Go To