Book Name:Aaina e Qayamat

قافلہ سارا روانہ ہو گیا

تاریخ کا پچھلا حصہ اور امام تشنہ کام کی شہادت

باغ جنت کے ہیں بہر مدح خوانِ اہل بیت

تم کو مژدہ نارکا اے دشمنانِ اہل بیت

کس زباں سے ہو بیان عزوشانِ اہل بیت

مدح گوئے مصطفی ہے مدح خوانِ اہل بیت

ان کی پاکی کاخدائے پاک کرتاہے بیاں

آیۂ تطہیر سے ظاہرہے شانِ اہل بیت

مصطفی عزت بڑھانے کے لئے تعظیم دیں

ہے بلند اقبال تیرا دودمانِ اہل بیت

ان کے گھر میں بے اجازت جبرئیل آتے نہیں

قدروالے جانتے ہیں قدر و شانِ اہل بیت

مصطفٰی ([1])  بائع خریدار   اس کا  اللہُ اشْتَرٰی([2])

خوب چاندی کر رہا ہے کاروانِ اہل بیت

رزم کا میداں بنا ہے جلوہ گاہِ حسن وعشق

کربلا میں ہو رہا ہے امتحانِ اہل بیت

پھول زخموں کے کھلائے ہیں ہوائے دوست نے

خون سے سینچا گیا ہے گلستانِ اہل بیت

حوریں کرتی ہیں عروسانِ شہادت کا سنگار

خوبرو دولھا بنا ہے ہر جوانِ اہل بیت

ہوگئی تحقیقِ عید دیدِ آبِ تیغ سے

اپنے روزے کھولتے ہیں صائمانِ اہل بیت

جمعہ کا دن ہے کتابیں زیست کی طے کر کے آج

کھیلتے ہیں جان پر شہزادگانِ اہل بیت

اے شبابِ فصلِ گل!یہ چل گئی کیسی ہوا

کٹ رہا ہے لہلہاتا بوستانِ اہل بیت

کس شقی کی ہے حکومت ہائے کیا اندھیر ہے؟

دن دھاڑے لٹ رہا ہے کاروانِ اہل بیت

خشک ہو جا خاک ہو کر خاک میں مل جا فرات

خاک تجھ پردیکھ تو سوکھی زبانِ اہلِ بیت

خاک پر عباس و عثمان علم بردار ہیں

 



[1]    بیچنے والے    

[2]    اشارہ بآیۂ کریمہ:     ان اللہ اشتری من المؤمنین انفسہم و اموالہم بان لہم الجنۃ ۔ بیشک اللہ نے مسلمانوں سے ان کے مال اور جان خرید لیے ہیں اس بدلے پر کہ ان کے لیے جنت ہے۔(مصنف رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ کے نعتیہ دیوان ’’ ذوقِ نعت ‘‘ میں  اشتری کے بجائے  مشتری لکھا  ہے۔ علمیہ)



Total Pages: 42

Go To