Book Name:Islami Shadi

خواہشوں کو پورا کرنے کیلئے آمدنی کے ناجائز ذرائع اختیار کرے اور شریعت کی حدیں پھلانگنے لگ جائے۔ یاد رکھئے! اگر ہم بیوی بچّوں یا والدین وغیرہ کی خواہشات پوری کرنے اور ان کے طعنوں سے بچنے کیلئے حرام و حلال کی پروا کئے بغیر مال و دولت جمع کرتے رہے ، مشکل وقت میں اُنہیں صبر و شکر ، تَوَکُّل و قناعت کا ذہن نہ دیا اور اُنہیں حلال و حرام کی تمیز نہ سکھائی تو کہیں ایسا نہ ہو کہ کل بروزِ قیامت وہی ہمارے خِلاف بارگاہِ الٰہی عَزَّ  وَجَلَّ میں مُقدَّمہ کردیں اور ہماری پکڑ ہوجائے ، جیساکہ

مالِ حرام کا وَبال

      حضرت سَیِّدُنا فقیہ ابواللَّیث سَمر قَندی رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ نَقل کرتے ہیں : مروی ہے کہ مرد سے تعلُّق رکھنے والوں میں پہلے اُس کی زَوجہ اور اُس کی اَولاد ہے ، یہ سب (یعنی بیوی ، بچّے قیامت میں )اللہ عَزَّ  وَجَلَّ کی بارگاہ میں عرض کریں گے : اے ہمارے رَبّ عَزَّ  وَجَلَّ! ہمیں اِس شخص سے ہمارا حق دِلا ، کیونکہ اِس نے کبھی ہمیں دِینی اُمور کی تعلیم نہیں دی اور یہ ہمیں حرام کھلاتاتھاجس کا ہمیں علم نہ تھا ، پھر اس  شخص کو حرام کمانے پر اس قدر ماراجائے گاکہ اس کا گوشت جَھڑجائے گاپھر اس کو میزان(یعنی ترازو) کے پاس لایا جائے گا ، فرشتے پہاڑ کے برابر اس کی نیکیاں لائیں گے تو اس کے عِیال (یعنی بال بچّوں )میں سے ایک شخص آگے بڑھ کر کہے گا : میری نیکیاں کم ہیں ، تو وہ اُس کی نیکیوں میں سے لے لے گا ، پھردوسرا آکر کہے گا : تُونے مجھے سُود کھلایا تھا اور اُس کی نیکیوں میں سے لے لے گا ، اِس طرح اُس کے گھر والے اس کی سب نیکیاں لے جائیں گے اور وہ اپنے اہل وعیال کی طرف حسرت ویاس(یعنی رَنْج و مایوسی) سے دیکھ کر کہے گا : اب میری گردن پر وہ گُناہ و مَظالم رہ گئے جو میں نے تمہارے لئے کئے تھے۔ فرشتے کہیں گے : یہ وہ شخص ہے جس کی نیکیاں اِس کے گھر والے لے گئے اور یہ اُن کی وجہ سے جہنّم میں چلاگیا۔ ([1]) 

      غور کیجئے !اس شخص کی بد نصیبی کا کیا عالَم ہوگا جواپنے اہل وعیال کی خاطِرحرام کماتا رہے اور بروزِ قیامت اس کے گھر والے ہی اُس کی تمام نیکیاں حاصل کرکے نجات پاجائیں اور وہ خُود قَلّاش (کنگال) رہ جائے۔ بدقسمتی سے مُعاشرے کے حالات اس قدر خراب ہوچکے ہیں کہ مال کی حرص وہَوَس میں نہ جانے کیسے کیسے گُناہوں کا اِرتکاب کیا جارہا ہے۔ نقلی ، مِلاوٹ والی اور عیب دار چیز کو اصلی ، معیاری اوراعلیٰ کوالٹی کی بتا کربیچا جارہا ہے ، اَوّلاً تو عیب ہی پوشیدہ رکھا جاتا ہے اور اگر کوئی خریدار کسی خرابی کی نشاندہی کرے تو اُسے یقین دِلانے کیلئے جُھوٹی قسمیں کھانے سے بھی گُریز نہیں کیا جاتا۔ یاد رکھئے!ماں باپ کی خدمت کرنا ، بیوی بچّوں کا خیال رکھنا اور اُن کی ضروریات کو پورا کرنا بُری بات نہیں ، بُری بات یہ ہے کہ انسان اپنی استطاعت سے بڑھ کر ان کی خواہشات پوری کرنے کی کوشش کرتے ہوئے مالِ حرام کی طرف پیش قدمی کرے اور ماں باپ ، بیوی بچّوں یا عزیز رشتے داروں کی خاطر اپنے آپ کو اُس اُخروی ہلاکت پر پیش کردے جس کی طرف حدیثِ پاک میں اشارہ فرمایا گیا ہے۔ چنانچہ

گھروالوں کے ہاتھوں ہلاک ہونے والا

      تمام نبیوں کے سَرْوَر ، دو جہاں کے تاجْوَر صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا : لوگوں پر ایک زمانہ ایسا آئے گا کہ مومن کو اپنا دین بچانے کیلئے ایک پہاڑ سے دوسرے پہاڑ اورایک غار سے دوسرے  غار کی طرف بھاگنا پڑے گا ، اس وقت روزی اللہ عَزَّ  وَجَلَّ کی ناراضگی ہی سے حا صل کی جائے گی۔ جب ایسا زمانہ آجائے گا تو آدمی اپنے بیوی بچّوں کے ہاتھوں ہلاک ہوگا ، اگر اس کے بیوی بچّے نہ ہوں تو وہ اپنے والدین کے ہاتھوں ہلاک ہوگا ، اگر اس کے والدین نہ ہوئے تو وہ رشتہ داروں اور پڑوسیوں کے ہاتھوں ہلاک ہوگا۔ صحابۂ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان نے عرض کی : یارسولَ اللّٰہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ! وہ کیسے؟فرمایا : وہ اُسے اُس کی تنگ دستی پر عار دلائیں گے تو وہ اپنے آپ کو ہلاکت میں ڈالنے والے کاموں میں مصروف کر دے گا۔([2])

اس حدیثِ پاک پر خصوصاً وہ اسلامی بہنیں غور کریں جو اپنے شوہروں کو ان کی آمدنی پر طرح طرح کے طعنے دیتے ہوئے اس طرح کی جلی کٹی باتیں سناتی ہیں : فُلاں نے اتنا بڑا مکان بنا لیا ، فُلاں کتنا خُوشحال ہوگیا ہے ، تم بھی تو کچھ کرو ، تمہاری تنخواہ میں تو گھر کے اَخْراجات ہی پورے نہیں ہوتےوغیرہ وغیرہ۔ نیز



[1]   قرة العیون  ، الباب الثامن فی عقوبة قاتل   الخ ،  ص۴۰۱

[2]   زھد کبیر ، ص۱۸۳ ، حدیث : ۴۳۹



Total Pages: 74

Go To