Book Name:Aankh Pharakna

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَالصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِط

آنکھ پھڑکنا ([1])

شیطان لاکھ سُستی دِلائے یہ رِسالہ(۲۵ صَفحات) مکمل پڑھ لیجیے اِنْ  شَآءَ اللّٰہ  معلومات کا اَنمول خزانہ  ہاتھ آئے  گا ۔

دُرُود شریف کی فضیلت

فَرمانِ مُصطفٰے صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم ہے  : جس نے کتا ب مىں مجھ پر دُرُودِ پاک لکھا تو جب تک مىرا نام اس مىں رہے گا فرشتے اس کے لىے اِسْتِغْفار (ىعنى بخشش کى دُعا) کرتے رہىں گے ۔  ([2])    

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

آنکھ پھڑکنے سے اچھا یا بُرا شگون لینا کیسا؟

سُوال : آنکھ پھڑکنے سے اچھا یا بُرا شگون لینا کیسا؟   

جواب : اچھا شگون لینا جائز ہے جبکہ کسی اچھی چیز سے بُرا شگون لینا جائز نہیں ۔ مثلاً اُلٹی آنکھ پھڑکنے سے یہ شگون لیا جائے کہ کوئی  مصیبت وغیرہ آنے والی ہے یہ ناجائز ہے ۔  ([3])   

گندم کی نعمت کا حُصُول اور اِستعمال

سُوال : گندم اللہ پاک کی عظیم نعمت ہے لیکن اِس سے پکنے والی روٹی کو بڑی بے دَردی سے ضائع کر دیا جاتا ہے ۔  حالانکہ دُنىا بھر مىں 80 کروڑ سے زائد لوگ  روزانہ بھوکے سوتے ہىں ۔  ہمىں اِس کے اِستعمال مىں کىا اِحتىاطىں کرنى چاہئیں اور جو لوگ اس کى تىارى مىں ملاوٹ وغىرہ کرتے ہىں ان کے لیے بھى مَدَنى پھول اِرشاد فرما دیجیے ۔ نیز اس کی تیاری میں کیا کیا  اچھی نیتیں کی جا  سکتی ہیں؟

جواب : گىہوں واقعى ضَرورىاتِ زندگى کا اہم حصّہ ہے  اور کوئى بھى اِنسان گىہوں کے اِستعمال سے غالباً محروم نہىں ہو گا ۔  ظاہر ہے ىہ اللہ پاک نے اىک بہت بڑى نعمت دى ہے لہٰذا اِس کی بلکہ ہر نعمت کى قدر کرنى چاہىے ۔  بندہ جو بھى کام کرے اس سے پہلے ىہ سوچ لے کہ اس مىں ثواب ملے گا یا  نہىں؟ ثواب ملے تو کرے ، نہ ملے تو پھر اس کو ثواب کا کام بنانے کى کوئى ترکىب سوچے ۔ اس لیے کہ مُباح کام جس مىں نہ ثواب ہو نہ گناہ، اس مىں اچھى نىتىں کرنے سے ثواب ملتا ہے اور وہ مُباح کام عبادت بن جاتا ہے ۔ ([4])لہٰذا گىہوں کھانے والے یہ نیت کریں کہ روٹى کھائىں گے تو عبادت پر قوت حاصِل ہو گى ۔  ىُوں کھانے سے پہلے عبادت پر قوت حاصِل کرنے کى نىت کى جا سکتى ہے نیز یہ نیتیں بھی کر لیں کہ بِسْمِ اللہ پڑھ کر کھاؤں گا ۔  چھوٹا نوالہ اچھى طرح چبا کر کھاؤں گا ۔  سُنَّت کے مُطابق کھاؤں گا ۔  اِس طرح کى مَزید کئى اور نىتىں کى جا سکتى ہىں ۔  

80 کروڑ لوگ رِزق کی تنگی کا شِکار ہیں

        رہی بات کہ روزانہ 80 کروڑ لوگ بھوکے سوتے ہىں ۔ کیا یہ کہنے والے نے اتنے لوگوں کو بھوکے سوتا دیکھا ہے ؟ یقیناً ایسا نہیں ہے ۔  یہ لوگ دِن میں تو کھانا کھاتے ہوں گے لہٰذا ىہ کہہ سکتے ہىں کہ اىک شُمار کے مُطابق 80 کروڑ لوگ رِزق کى تنگى کا شکار ہىں، ان کو کھانا کم ملتا ہے ۔ ورنہ تو اگر کھانا بالکل بھی نہ ملے تو کوئى جى نہىں سکتا، خالى ہوا کھا کر زندہ رہنا ممکن نہىں ہے ۔  بہرحال کافى لوگ اِس وقت غُربت کا شِکار ہىں  ۔ جہاں مال ہے تو وہاں ڈھىروں ڈھىر ہے اور جہاں نہىں ہے تو وہاں تنگى ہے ۔ ہمارے ىہاں بہت اناج فُضُول ضائع کيا جاتا ہے ۔  مىں نے دىکھا ہے کہ بچی ہوئی روٹىوں کے پورے پورے تھپے پھىنک دیئے جاتے ہىں ۔  ہمارے وطنِ عزىز پاکستان مىں  تو کچرا کنڈى پر پھىنکنے کا رَواج نہىں ہے مگر بیرونی ممالک مىں تو بَدقسمتى سے کچرا کنڈى ىا ڈسٹ بىن مىں روزانہ لاکھوں کروڑوں روپے کا اناج پھىنک دىا جاتا ہے جو کسى



[1]    یہ رِسالہ  ۲۰جمادی الاولیٰ ۱۴۴۰؁ ھ بمطابق 26جنوری 2019 کو عالمی مَدَنی مَرکز فیضانِ مدینہ بابُ المدینہ(کراچی)میں ہونے والے مَدَنی مذاکرے کا تحریری گلدستہ ہے ، جسے اَلْمَدِیْنَۃُ الْعِلْمِیَّۃ کے شعبے ’’فیضانِ مَدَنی مذاکرہ‘‘نے مُرتَّب کیا ہے ۔  (شعبہ فیضانِ  مَدَنی مذاکرہ)  

[2]    معجمِ اوسط، باب الالف، من اسمه احمد، ۱ / ۴۹۷، حدیث : ۱۸۳۵ دار الکتب العلمية بیروت

[3]    بدشگونی، ص۱۲۰مکتبۃ المدینہ باب المدینہ کراچی

[4]    احیاء العلوم، کتاب النیة و الاخلاص والصدق، الباب الاول فی النية، ۵ / ۹۷ ماخوذاً دار صادر بیروت



Total Pages: 12

Go To