Book Name:Islah Kay Madani Phool (Part 1)

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

” تنظیمی تربیت پر مشتمل بیانات “ کے ڈبل بارہ  حروف کی نسبت سے اس کتاب کو پڑھنے کی ’’24نیّتیں‘‘

فرمانِ مُصْطَفٰے صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  : نِیَّۃُ الْمُؤْمِنِ خَیْرٌ مِّنْ عَمَلِہٖ مسلمان کی نیّت اس کے عمل سے بہتر ہے ۔ (معجم کبیر، ۶ /  ۱۸۵، حدیث : ۵۹۴۲)

دو مدنی پھول :          ٭ بِغیر اچّھی نیّت کے کسی بھی عَمَلِ خَیر کا ثواب نہیں ملتا ۔ 

٭جتنی اچّھی نیّتیں زِیادہ، اُتنا ثواب بھی زِیادہ ۔ 

(1)ہر بارحَمدو(2)صلوٰۃ اور (3)تعوُّذ و (4)تَسمِیہ سے آغاز کروں گا ۔  (اسی صفحہ پر اُوپر دی ہوئی دو عَرَبی عِبارات پڑھ لینے سے ان نیّتوں پر عَمَل ہوجائے گا) (5)رِضائے الٰہی کیلئے اس کتاب کا اوّل تا آخر مُطالَعَہ کروں گا (6)حتَّی الوَسْعْ اِس کا باوُضُو اور (7)قِبلہ رُو مُطالَعَہ کرونگا (8)قرآنی آیات اور (9)احادیثِ مُبارَکہ کی زِیَارَت کرونگا (10)جہاں سرکار کا اِسْم مُبارَک آئے گا وہاں صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم پڑھوں گا(11)جہاں کسی صحابی کا نام آئے گا وہاں رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ اور (12)جہاں کسی غیر صحابی بزرگ کا نام آئے گا وہاں رَحْمَۃُ اللّٰہ ِتَعَالٰی عَلَیْہ  پڑھونگا (13)علم حاصِل کرونگا (14)اس میں مَوجُود تنظیمی تربیت کے مدنی پھولوں پر خود عَمَل کرونگا اور(15)دیگر اسلامی بھائیوں کی خیر خواہی چاہتے ہوئے (16)ان تک بھی پہنچاؤں گا نیز (17) ان  کو یہ کتاب پڑھنے کی ترغیب بھی دلاؤں گا(18) (اپنے ذاتی نسخے پر) یاد داشت والے صفحہ پر ضروری نکات لکھوں گا (19) (اپنے ذاتی نسخے پر)ضرورتاً خاص خاص مقامات انڈر لائن کرونگا (20)اس حدیثِ پاک تَھَادَوا تَحَابُّوا ایک دوسرے کو تحفہ دو آپس میں مَحبَّت بڑھے گی ۔ (مؤطا امام مالك، ۲ / ۴۰۷، حدیث :  ۱۷۳۱) پر عَمل کی نیَّت سے (21) (ایک یا حسبِ توفیق) یہ کتاب  خرید کر دوسروں کو تحفۃً دوں گا(22)بزرگانِ دین کی سیرت اپنانے کی کوشش کروں گا (23)اس کتاب کے مُطَالَعَہ کا ثواب ساری اُمَّت  کو ایصال کروں گا(24)کِتَابَت وغیرہ میں شَرْعِی غَلَطی ملی تو ناشِرین کو تحریری طورپر مطلع کروں گا ۔  اِنْ شَآءَ اللہعَزَّ  وَجَلَّ(ناشرین کو کتابوں کی اغلاط صرف زبانی بتا دینا خاص مفید نہیں ہوتا) ۔

المدینۃ العلمیۃ

از شیخ طریقت، امیرِ اہلسنّت ، بانی دعوتِ اسلامی حضرت علّامہ مولاناابوبلال محمد الیاس عطارقادِری رضوی ضیائیدَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ

اَ لْحَمْدُلِلّٰهِ عَلٰی اِحْسَا نِهٖ وَ بِفَضْلِ رَسُوْلِهٖ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  عاشِقانِ رسول کی مَدَنی تحریک ’’دعوتِ اسلامی‘‘نیکی کی دعوت، اِحیائے سنّت اور اِشَاعَتِ عِلْمِ شَریعَت کو دنیا بھر میں عام کرنے کا عَزْمِ مُصَمَّم رکھتی ہے ، اِن تمام اُمور کو بحسن خوبی سر اَنْجَام دینے کے لئے مُتَعَدِّد مَجالِس کا قِیام عَمَل میں لایا گیا ہے جن میں سے ایک مجلس ’’اَلْمَدِیْنَۃُ الْعِلْمِیَۃ‘‘بھی ہے جو دعوتِ اسلامی کے عُلَما ومفتیانِ کِرَام کَثَّـرَھُمُ اللّٰہُ السَّلَام پر مُشْتَمِل ہے ، جس نے خالِص عِلْمی، تحقیقی اور اِشَاعتی کام کا بیڑا اُٹھایا ہے ۔ اس کے مندرجہ ذیل چھ۶ شعبے ہیں :

(۱)شعبہ کتبِ اعلیٰ حضرت        (۲)شعبہ تراجم کتب

(۳)شعبہ درسی کُتُب                (۴)شعبہ اصلاحی کتب

(۵)شعبہ تفتیش کتب               (۶)شعبہ تخریج )[1](

’’اَلْمَدِیْنَۃُ الْعِلْمِیَۃ‘‘کی اوّلین ترجیح سرکارِ اعلیٰ حضرت، اِمامِ اَہلسنّت، عظیم البَرَکت، عظیمُ المرتبت، پروانۂ شَمْعِ رِسالت، مُجَدِّدِ دین و مِلَّت، حامِیِ سنّت، ماحِیِ بِدعت، عالِمِ شریعت، پیر طریقت، باعِثِ خیر و بَرَکَت، حضرتِ علاّمہ مولانا الحاج الحافِظ القاری شاہ امام اَحمد رَضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰنکی گراں مایہ تصانیف کو عصرِ حاضِر کے تقاضوں کے مطابق حتی الْوَسْع سَہْل اُسْلُوب میں پیش کرنا ہے ۔ تمام اسلامی بھائی اور اسلامی بہنیں اِس عِلمی، تحقیقی اور اِشَاعتی



[1]     تادمِ تحریر(محرم الحرام ۱۴۴۰ھ)ان شعبوں کی تعداد 15ہوچکی ہے:(۷)فیضانِ قراٰن  (۸) فیضانِ حدیث (۹)فیضانِ صحابہ واہل بیت  (۱۰) فیضانِ صحابیات وصالحات  (۱۱)شعبہ امیراہلسنّت (۱۲)فیضانِ مدنی مذاکرہ (۱۳)فیضانِ اولیاوعلما (۱۴) بیاناتِ دعوتِ اسلامی(۱۵)رسائلِ دعوت اسلامی۔  (مجلس المدینۃ العلمیۃ)



Total Pages: 144

Go To