Book Name:Saman-e-Bakhsish

گلہائے ثنا سے مہکتے ہوئے ہار           سقم شرعی سے منزہ اَشعار

دشمن کی نظر میں یہ نہ کھٹکیں کیوں کر        ہیں پھول مگر چشم اَعدا میں خار

 

            میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! نعت اَصنافِ سخن میں مشکل ترین صنف ہے اس میں طبع آزمائی کرنے والوں پر ایک خوف طاری رہتا ہے کہ اگر ذرا بھی اِفراط و تفریط ہوئی تو ایمان جانے کا خطرہ ہے ۔مَلفوظات شریف میںامام اہل سنت رَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ فرماتے ہیں: ’’  حقیقۃً نعت شریف لکھنا نہایت مشکل ہے جس کو لوگ آسان سمجھتے ہیں، اِس میں تلوار کی دَھار پر چلنا ہے ، اگر بڑھتا ہے تو اُلوہیت میں پہنچا جاتا ہے اور کمی کرتا ہے تو تنقیص (یعنی شان میں کمی وگستاخی)ہوتی ہے ، البتہ ’’ حمد ‘‘آسان ہے کہ اِس میں راستہ صاف ہے جتنا چاہے بڑھ سکتا ہے ۔ غرض’’ حمد‘‘ میں ایک جانب اَصلاً حد نہیں اور ’’  نعت شریف ‘‘ میں دونوں جانب سخت حد بندی ہے ۔‘‘  (ملفوظاتِ اعلیٰ حضرت، ۲ / ۲۲۷، مکتبۃ المدینہ)

           امیر اہلسنت دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ فرماتے ہیں: نعتیہ شاعری ہر ایک کا کام نہیں اور چونکہ کلام کو شریعت کی کسوٹی پر پرکھنے کی ہر ایک میں صلاحیت نہیں ہوتی لہٰذا عافیت اسی میں ہے کہ مستند علمائے اہلسنت کا کلام سنا جائے ۔ اردو کلام سننے کیلئے مشورۃً’’ نعت رسول‘‘کے سات حروف کی نسبت سے سات اَسمائے گرامی حاضر ہیں {۱}امامِ اہل سنّت، مولانا شاہ امام احمد

 رضاخان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰن (حدائق بخشش) {۲} استاذِ زَمَن حضرت مولانا حسن رضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الْمَنَّان(ذَوقِ نعت) {۳}خلیفۂ   اعلیٰ حضرت مَدَّاح ُالحبیب حضرت مولانا جمیل الرحمٰن رضوی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الْقَوِی (قبالۂبخشش)  {۴}شہزادہِ اعلیٰ حضرت، تاجدارِ اہلسنّت حضور مفتی اعظم ہند مولانا مصطَفٰے رضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الْحَنَّان  (سامانِ بخشش) {۵}شہزادہِ اعلیٰ حضرت ، حجۃ الاسلام حضرتِ مولانا حامد رضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الْمَنَّان (بیاض پاک) {۶}خلیفۂ  اعلیٰ حضرت صدرُ الافاضِل حضرتِ علامہ مولانا سیِّد محمد نعیم الدین مراد آبادی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللّٰہِ الْہَادِی(ریاض نعیم) {۷} مُفَسّرِشہیر حکیم الا مَّت حضرتِ مفتی احمد یار خانعَلَیْہِ رَحْمَۃُ الْحَنَّان (دیوانِ سالک) ۔ ‘‘

                  (کفریہ کلمات کے بارے میں سوال جواب، ص۲۳۶، مکتبۃ المدینہ)

           اَلْحَمْدُ لِلّٰہ عَزَّوَجَلَّتبلیغ قرآن و سنت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک دعوتِ اسلامی کی مجلس ’’ المدینۃ العلمیۃ ‘‘ ان تمام بزرگوں کے مذکورہ کلام، دور ِجدید کے تقاضوں کو مَد نظر رکھتے ہوئے بہتر انداز میں شائع کرنے کا عزم رکھتی ہے ۔ اس سلسلے میں امامِ اہل سنت کاکلام ’’حدائق بخشش ‘‘ ، حجۃ الاسلام مولانا حامد رضا خان کا انتخاب ِکلام ’’ بیاض پاک ‘‘ اور شہنشاہِ سخن کا کلام  ’’ ذوقِ نعت ‘‘طبع ہوکر منظر عام پر آچکا ہے اور اب تاجدارِ اہلسنت   مفتیٔ اعظم ہند کا کلام ’’ سامانِ بخشش‘‘ آپ کے ہاتھوں میں ہے ۔

٭ سامانِ بخشش پرکام کے لیے ذیل میں درج نسخے سامنے رکھے گئے : (1)حزبُ الاحناف مرکز الاولیاء لاہور(سن طباعت نہیں لکھا)  (2)رضا اکیڈمی ممبئی، ہند (ذی الحجہ ۱۴۲۸ھ / جنوری۲۰۰۸ء) (3)رضوی کتاب گھر، دہلی، ہند (مطبوعہ۱۴۰۵ھ / ۱۹۸۵ء) جو کہ خلفیۂ مفتی اعظم ہند قاری امانت رسول رضوی صاحب کا تصحیح کردہ ہے چنانچہ عرضِ ناشر کے تحت ص ۶ پر لکھا ہے : ’’قاری (امانت رسول)صاحب نے فرمایا کہ حضرت(مفتی اعظم ہند) کا پورا قلمی دیوان نقل شدہ



Total Pages: 123

Go To