Book Name:Zoq-e-Naat

اُسے قسمت نے اُس کے جیتے جی جنت میں پہنچایا

جو دَم لینے کو بیٹھا سایۂ دیوارِ جاناں میں

 

کیا پروانوں کو بلبل نرالی شمع لائے تم

گرے پڑتے تھے جو آتش پہ وہ پہنچے گلستاں میں

 

نسیم طیبہ سے بھی شمع گل ہو جائے لیکن یوں

کہ گلشن پھولیں جنت لہلہا اُٹھے چراغاں میں

 

اگر دُودِ چراغِ بزمِ شہ چھو جائے کاجل سے

شب قدرِ تجلی کا ہو سرمۂ چشم خوباں میں

 

کرم فرمائے گر باغِ مدینہ کی ہوا کچھ بھی

گل جنت نکل آئیں ابھی سروِ چراغاں میں

 

چمن کیونکر نہ مہکیں بلبلیں کیونکر نہ عاشق ہوں

تمہارا جلوۂ رنگیں بھرا پھولوں نے داماں میں

 

اگر دُودِ چراغِ بزمِ والا مَس کرے کچھ بھی

شمیمِ مشک بس جائے گلِ شمعِ شبستاں میں

 

یہاں کے سنگریزوں سے حسنؔ کیا لعل کو نسبت

یہ ان کی رہ گزر میں ہیں وہ پتھر ہے بدخشاں میں

عجب کرم شہ والا تبار کرتے ہیں

عجب کرم شہِ والا تبار کرتے ہیں

کہ نااُمیدوں کو اُمیدوار کرتے ہیں

 

جما کے دِل میں صفیں حسرت و تمنا کی

نگاہِ لطف کا ہم اِنتظار کرتے ہیں

 

مجھے فَسُردَگیٔ بخت کا اَلم کیا ہو

وہ ایک دم میں خزاں کو بہار کرتے ہیں

 

خدا سگانِ نبی سے یہ مجھ کو سنوا دے

ہم اپنے کتوں میں تجھ کو شمار کرتے ہیں

 

ملائکہ کو بھی ہیں کچھ فضیلتیں ہم پر

کہ پاس رہتے ہیں طوفِ مزار کرتے ہیں

 

جو خوش نصیب یہاں خاکِ در پہ بیٹھتے ہیں

 



Total Pages: 158

Go To