Book Name:Zoq-e-Naat

بھیو دو جو بیکنٹھ بگداد تو سے

کہو موری نگری بھی آ غوثِ اعظم

 

کہے کس سے جا کر حسنؔ اپنے دل کی

سنے کون تیرے سوا غوثِ اعظم

کون کہتا ہے کہ زینت خلد کی اچھی نہیں

کون کہتا ہے کہ زینت خلد کی اچھی نہیں

لیکن اے دل فرقتِ کوئے نبی اچھی نہیں

 

رحم کی سرکار میں پرسش ہے ایسوں کی بہت

اے دل اچھا ہے اگر حالت مری اچھی نہیں

 

تیرہ دل کو جلوۂ ماہِ عرب دَرکار ہے

چودھویں کے چاند تیری چاندنی اچھی نہیں

 

کچھ خبر ہے میں برا ہوں کیسے اچھے کا برا

مجھ برے پہ زاہدو طعنہ زَنی اچھی نہیں

 

اس گلی سے دُور رہ کر کیا مریں ہم کیا جئیں

آہ ایسی موت ایسی زندگی اچھی نہیں

 

اُن کے دَر کی بھیک چھوڑیں سروَری کے واسطے

اُن کے دَر کی بھیک اچھی سروَری اچھی نہیں

 

خاک اُن کے آستانے کی منگا دے چارہ گر

فکر کیا حالت اگر بیمار کی اچھی نہیں

 

سایۂ دیوارِ جاناں میں ہو بستر خاک پر

آرزوئے تاج و تخت خسروَی اچھی نہیں

 

دَردِ عصیاں کی ترقی سے ہوا ہوں جاں بلب

مجھ کو اچھا کیجیے حالت مری اچھی نہیں

 

ذَرَّۂ طیبہ کی طلعت کے مقابل اے قمر

گھٹتی بڑھتی چار دن کی چاندنی اچھی نہیں

 

موسم گل کیوں دکھائے جاتے ہیں یہ سبز باغ

دشتِ طیبہ جائیں گے ہم رہزنی اچھی نہیں

 

بیکسوں پر مہرباں ہے رحمتِ بیکس نواز

 



Total Pages: 158

Go To