Book Name:Zoq-e-Naat

جس طرح سے عاشقوں کا دل ہے قربانِ جمال

ہے یوہیں قربان تیری شکل پر جانِ جمال

 

بے حجابانہ دِکھا دو اِک نظر آنِ جمال

صدقے ہونے کے لئے حاضر ہیں خواہانِ جمال

 

تیرے ہی قامت نے چمکایا مقدر حسن کا

بس اسی اِکِّے سے روشن ہے شبستانِ جمال

 

رُوح لے گی حشر تک خوشبوئے جنت کے مزے

گر بسا دے گا کفن عطر گریبانِ جمال

 

مر گئے عشاق لیکن وا ہے چشم منتظر

حشر تک آنکھیں تجھے ڈھونڈیں گی اے جانِ جمال

 

پیشگی ہی نقد جاں دیتے چلے ہیں مشتری

حشر میں کھولے گا یارب کون دکانِ جمال

 

عاشقوں کا ذکر کیا معشوق عاشق ہوگئے

انجمن کی انجمن صدقے ہے اے جانِ جمال

 

تیری ذُرِّیت کا ہر ذَرَّہ نہ کیوں ہو آفتاب

سر زمین حسن سے نکلی ہے یہ کانِ جمال

 

بزمِ محشر میں حسینانِ جہاں سب جمع ہیں

پر نظر تیری طرف اُٹھتی ہے اے جانِ جمال

 

آرہی ہے ظلمت شب ہائے غم پیچھا کئے

نورِ یزداں ہم کو لے لے زیر دامانِ جمال

 

وسعت بازارِ محشر تنگ ہے اس کے حضور

کس جگہ کھولے کسی کا حسن دکان جمال

 

خوبرویانِ جہاں کو بھی یہی کہتے سنا

تم ہو شانِ حسن جانِ حسن ایمانِ جمال

 

تیرہ و تاریک رہتی بزمِ خوبانِ جہاں

گر تیرا جلوہ نہ ہوتا شمع ایوانِ جمال

 

 

 



Total Pages: 158

Go To