Book Name:Zoq-e-Naat

ذَرَّۂ دَر سے تِرے ہمسر ہوں کیا مہر و قمر

یہ ہے سلطانِ جمال اور وہ گدایانِ جمال

 

کیا مزے کی زندگی ہے زندگی عشاق کی

آنکھیں ان کی جستجو میں دِل میں ارمانِ جمال

 

رُو سیاہی نے شب دِیجور کو شرما دیا

مونھ اُجالا کر دے اے خورشیدِ تابانِ جمال

 

اَبروئے پُر خم سے پیدا ہے ہلالِ ماہِ عید

مطلعِ عارِض سے روشن بدرِ تابانِ جمال

 

دل کشیٔ حُسنِ جاناں کا ہو کیا عالم بیاں

دل فدائے آئنہ آئینہ قربانِ جمال

 

پیشِ یوسف ہاتھ کاٹے ہیں زَنانِ مصر نے

تیری خاطر سر کٹا بیٹھے فدایانِ جمال

 

تیرے ذَرَّہ پر شب غم کی جفائیں تابکے

نور کا تڑکا دکھا اے مہر تابانِ جمال

 

اتنی مدت تک ہو دید َمصحفِ عارِض نصیب

حفظ کر لوں ناظرہ پڑھ پڑھ کے قرآنِ جمال

 

یا خدا دل کی گلی سے کون گزرا ہے کہ آج

ذَرَّہ ذَرَّہ سے ہے طالع مہر تابانِ جمال

 

اُن کے دَر پر اِس قدر بٹتا ہے باڑہ نور کا

جھولیاں بھر بھر کے لاتے ہیں گدایانِ جمال

 

نور کی بارش حسنؔ پر ہو ترے دیدار سے

دِل سے دُھل جائے الٰہی داغِ حرمانِ جمال

بزم محشر منعقد کر میر سامان جمال

بزمِ محشر منعقد کر میرِ سامانِ جمال

دل کے آئینوں کو مدت سے ہے اَرمانِ جمال

 

اپنا صدقہ بانٹتا آتا ہے سلطانِ جمال

جھولیاں پھیلائے دوڑیں بے نوایانِ جمال

 

 

 



Total Pages: 158

Go To