Book Name:Zoq-e-Naat

بلائے جان ہے اب وِیرانیٔ دل

چلے آؤ کبھی اس اُجڑے گھر تک

 

نہ کھول آنکھیں نگاہِ شوقِ ناقص

بہت پردے ہیں حسن جلوہ گر تک

 

جہنم میں دھکیلیں نجدیوں کو

حسنؔ جھوٹوں کو یوں پہنچائیں گھر تک

طور نے تو خوب دیکھا جلوۂ شان جمال

طور نے تو خوب دیکھا جلوۂ شانِ جمال

اس طرف بھی اِک نظر اے برقِ تابانِ جمال

 

اِک نظر بے پردَہ ہو جائے جو لمعانِ جمال

مردُمِ دِیدہ کی آنکھوں پر جو احسانِ جمال

 

چل گیا جس راہ میں سروِ خرامانِ جمال

نقش پا سے کھل گئے لاکھوں گلستانِ جمال

 

ہے شب غم اور گرفتارانِ ہجرانِ جمال

مہر کر ذَرّوں پہ اے خورشیدِ تابانِ جمال

 

کر گیا آخر لباسِ لالہ و گل میں ظہور

خاک میں ملتا نہیں خونِ شہیدانِ جمال

 

ذَرَّہ ذَرَّہ خاک کا ہو جائے گا خورشید حشر

قبر میں لے جائیں گے عاشق جو اَرمانِ جمال

 

ہوگیا شاداب عالم آگئی فصل بہار

اُٹھ گیا پردَہ کھلا بابِ گلستانِ جمال

 

جلوۂ موئے محاسن چہرۂ اَنور کے گرد

آبنوسی رحل پر رکھا ہے قرآنِ جمال

 

اس کے جلوے سے نہ کیوں کافور ہوں ظلماتِ کفر

پیش گاہِ نور سے آیا ہے فرمانِ جمال

 

کیا کہوں کتنا ہے ان کی رہ گزر میں جوشِ حسن

آشکارا ذَرَّہ ذَرَّہ سے ہے میدانِ جمال

 

 

 



Total Pages: 158

Go To