Book Name:Zoq-e-Naat

نوابیاں سدھاریں جاری ہیں شاہی آئیں

کچا ہوا علاقہ صبحِ شبِ وِلادت

 

دن پھر گئے ہمارے سوتے نصیب جاگے

خورشید ہی وہ چمکا صبحِ شبِ وِلادت

 

قربان اے دوشنبہ تجھ پر ہزار جمعے

وہ فضل تو نے پایا صبحِ شبِ وِلادت

 

پیارے رَبیع الاوّل تیری جھلک کے صدقے

چمکا دیا نصیبا صبحِ شبِ وِلادت

 

وہ مہر مہر فرما وہ ماہ عالم آراء

تاروں کی چھاؤں آیا صبحِ شبِ وِلادت

 

نوشہ بناؤ ان کو دولہا بناؤ ان کو

ہے عرش تک یہ ُشہرا صبحِ شبِ وِلادت

 

شادی رَچی ہوئی ہے بجتے ہیں شادیانے

دولہا بنا وہ دولہا صبحِ شبِ وِلادت

 

محروم رہ نہ جائیں دن رات برکتوں سے

اس واسطے وہ آیا صبحِ شبِ وِلادت

 

عرشِ عظیم جھومے کعبہ زمین چومے

آتا ہے عرش والا صبحِ شبِ وِلادت

 

ُہشیار ہوں بھکاری نزدیک ہے سواری

یہ کہہ رہا ہے ڈَنکا صبحِ شبِ وِلادت

 

بندوں کو عیش و شادی اَعدا کو نامرادی

کڑکیت کا ہے کڑکا صبحِ شبِ وِلادت

 

تارے ڈھلک کر آئے کاسے کٹورے لائے

یعنی بٹے گا صدقہ صبحِ شبِ وِلادت

 

آمد کا شور سن کر ِگھر آئے ہیں بھکاری

گھیرے کھڑے ہیں رستہ صبحِ شبِ وِلادت

 

 

 



Total Pages: 158

Go To