Book Name:Zoq-e-Naat

اَنوار کی ضیائیں پھیلی ہیں شام ہی سے

رکھتی ہے مہر کیسا صبحِ شبِ وِلادت

 

مکہ میں شام کے گھر روشن ہیں ہر نگہ پر

چمکا ہے وہ اُجالا صبحِ شبِ وِلادت

 

شوکت کا دَبدبہ ہے ہیبت کا زلزلہ ہے

شق ہے مکانِ کسریٰ صبحِ شبِ وِلادت

 

خطبہ ہوا زمیں پر سکہ پڑا فلک پر

پایا جہاں نے آقا صبحِ شبِ وِلادت

 

آئی نئی حکومت سکہ نیا چلے گا

عالم نے رنگ بدلا صبحِ شبِ وِلادت

 

رُوحُ الامیں نے گاڑا کعبہ کی چھت پہ جھنڈا

تا عرش اُڑا پھریرا صبحِ شبِ وِلادت

 

دونوں جہاں کی شاہی ناکتخدا دُولہن تھی

پایا دولہن نے دولہا صبحِ شبِ وِلادت

 

پڑھتے ہیں عرش والے سنتے ہیں فرش والے

سلطانِ نو کا خطبہ صبحِ شبِ وِلادت

 

چاندی ہے مفلسوں کی باندی ہے خوش نصیبی

آیا کرم کا داتا صبحِ شبِ وِلادت

 

عالم کے دفتروں میں ترمیم ہو رہی ہے

بدلا ہے رنگ دنیا صبحِ شبِ وِلادت

 

ظلمت کے سب رِجسٹر حرفِ غَلَط ہوئے ہیں

کاٹا گیا سیاہا صبحِ شبِ وِلادت

 

ملک اَزَل کا سروَر سب سروَروں کا اَفسر

تخت اَبد پہ بیٹھا صبحِ شبِ وِلادت

 

سوکھا پڑا ہے ساوا دریا ہوا سماوا

ہے خشک و تر پہ قبضہ صبحِ شبِ وِلادت

 

 

 



Total Pages: 158

Go To