Book Name:Zoq-e-Naat

گرمی پہ یہ بازار ہے عثمانِ غنی کا

اللّٰہ    خریدار   ہے   عثمانِ   غنی   کا

 

کیا لعل شکر بار ہے عثمانِ غنی کا

قند ایک نمک خوار ہے عثمانِ غنی کا

 

سرکار عطا پاش ہے عثمانِ غنی کی

دَربار دُرَر بار ہے عثمانِ غنی کا

 

دل سوختو ہمت جگر اَب ہوتےہیں ٹھنڈے

وہ سایۂ دیوار ہے عثمانِ غنی کا

 

جو دل کو ضیا دے جو مقدر کو جِلا دے

وہ جلوۂ دیدار ہے عثمانِ غنی کا

 

جس آئینہ میں نورِ الٰہی نظر آئے

وہ آئینہ رخسار ہے عثمانِ غنی کا

 

سرکار سے پائیں گے مرادوں پہ مرادیں

دَربار یہ دُربار ہے عثمانِ غنی کا

 

آزاد گرفتارِ بلائے دو جہاں ہے

آزاد گرفتار ہے عثمانِ غنی کا

 

بیمار ہے جس کو نہیں آزارِ محبت

اچھا ہے جو بیمار ہے عثمانِ غنی کا

 

اللّٰہ  غنی  حد  نہیں  انعام  و  عطا  کی

وہ فیض پہ دَربار ہے عثمانِ غنی کا

 

رُک جائیں مرے کام حسنؔ ہو نہیں سکتا

فیضان مددگار ہے عثمانِ غنی کا

منقبت خلیفۂ چہارم کَرَّمَ اللّٰہُ تَعَالٰی وَجْہَہٗ الْکَرِیْم

اے حبِ وطن ساتھ نہ یوں سوئے نجف جا

ہم اور طرف جاتے ہیں تو اور طرف جا

 

چل ہند سے چل ہند سے چل ہند سے غافل

اُٹھ سوئے نجف سوئے نجف سوئے نجف جا

 

 



Total Pages: 158

Go To