Book Name:Zoq-e-Naat

ترا رشتہ بنا شیرازۂ جمعیت خاطر

پڑا   تھا   دفتر   دِین  کتابُ   اللّٰہ   برہم    سا

 

مراد آئی مرادیں ملنے کی پیاری گھڑی آئی

ملا حاجت رَوا ہم کو دَرِ سلطانِ عالم سا

 

تِرے جود و کرم کا کوئی اندازہ کرے کیونکر

ترا اِک اِک گدا فیض و سخاوت میں ہے حاتم سا

 

خدارا مہر کر اے ذَرَّہ پروَر مہرِ نورانی

سیہ بختی سے ہے رَوزِ سیہ میرا شبِ غم سا

 

تمہارے دَر سے جھولی بھر مرادیں بھر کر اُٹھیں گے

نہ کوئی بادشاہ تم سا نہ کوئی بے نوا ہم سا

 

فدا اے اُمِّ کلثوم آپ کی تقدیر یاوَر کے

علی بابا ہوا دولہا ہوا فاروقِ اَکرم سا

 

غضب میں دشمنوں کی جان ہے تیغ سر افگن سے

خروج و رَفض کے گھر میں نہ کیوں برپا ہو ماتم سا

 

شیاطیں مضمحل ہیں تیرے نامِ پاک کے ڈر سے

نکل جائے نہ کیوں رَفَّاضِ بد اَطوار کا دَم سا

 

منائیں عید جو ذی الحجہ میں تیری شہادت کی

الٰہی روز و ماہ و سن انہیں گزرے محرم سا

 

حسنؔ دَر عالمِ پستی سَرِ رِفعت اگر داری

بیا  َفرقِ اِرادت بر دَرِ فاروق اعظم سا

 

روشنی بخش چہرہ

         حضرت سیدنا اسید بن ابی اناس رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ فرماتے ہیں  :  آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے ایک بار میرے چہرے اور سینے پر اپنا دست پراَنوار پھیر دیا۔ اس کی برکت یہ ظاہر ہوئی کہ میں جب بھی کسی اندھیرے گھر میں داخل ہوتا وہ گھر روشن ہوجاتا۔(الخصائص الکبری للسیوطی، ۲ / ۱۴۲ملتقطاً، دارالکتب العلمیۃ بیروت تاریخ مدینہ دمشق لابن عساکر، ۲۰ / ۲۱، دارالفکر بیروت)

 

منقبت خلیفۂ سوّم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ

اللّٰہسے  کیا   پیار  ہے  عثمانِ غنی  کا

محبوبِ خدا یار ہے عثمانِ غنی کا

 

رنگین وہ رُخسار ہے عثمانِ غنی کا

بلبل گلِ گلزار ہے عثمانِ غنی کا

 



Total Pages: 158

Go To