Book Name:Zoq-e-Naat

اگر پیوند ملبوسِ پیمبر کے نظر آتے

ترا اے حلۂ شاہی کلیجہ چاک ہوجاتا

 

جو وہ گل سونگھ لیتا پھول مرجھایا ہوا بلبل

بہارِ تازگی میں سب چمن کی ناک ہو جاتا

 

چمک جاتا مقدر جب دُرِ دَنداں کی طلعت سے

نہ کیوں رشتہ گہر کا ریشۂ مسواک ہوجاتا

 

عدو کی آنکھ بھی محشر میں حسرت سے نہ منھ تکتی

اگر تیرا کرم کچھ اے نگاہِ پاک ہو جاتا

 

بہارِ تازہ رہتیں کیوں خزاں میں دَھجیاں اُڑتیں

لباسِ گل جو اُن کی ملگجی پوشاک ہو جاتا

 

کماندارِ نبوت قادر اندازی میں یکتا ہیں

دو عالم کیوں نہ ان کا بستۂ فتراک ہو جاتا

 

نہ ہوتی شاق اگر دَر کی جدائی تیرے ذَرَّہ کو

قمر اِک اَور بھی روشن سر اَفلاک ہو جاتا

 

تری رحمت کے قبضہ میں ہے پیارے قلب ماہیت

مِرے حق میں نہ کیوں زہرِ گنہ تریاک ہو جاتا

 

خدا تارِ رَگِ جاں کی اگر عزت بڑھا دیتا

شراکِ نعل پاک سید لولاک ہو جاتا

 

تجلی گاہِ جاناں تک اُجالے سے پہنچ جاتے

جو تو اے توسن عمر رَواں چالاک ہو جاتا

 

اگر تیری بھرن اے اَبر رحمت کچھ کرم کرتی

ہمارا چشمۂ ہستی اُبل کر پاک ہو جاتا

 

حسنؔ اہل نظر عزت سے آنکھوں میں جگہ دیتے

اگر یہ مشت خاک اُن کی گلی کی خاک ہو جاتا

 

دشمن ہے گلے کا ہار آقا

دشمن ہے گلے کا ہار آقا                     لٹتی ہے مری بہار آقا

تم دل کے لیے قرار آقا                     تم راحتِ جانِ زار آقا

تم عرش کے تاجدار مولی                   تم فرش کے باوَقار آقا

 



Total Pages: 158

Go To