Book Name:Zoq-e-Naat

اُس ماہ نے جب مہر سے کی جلوہ نمائی

تاریکیوں کو شامِ غریباں سے نکالا

 

اے مہر کرم تیری تجلی کی ادا نے

ذَرَّوں کو بلائے شب ہجراں سے نکالا

 

صدقے تِرے اے مرد مک دیدۂ یعقوب

یوسف کو تری چاہ نے کنعاں سے نکالا

 

ہم ڈوبنے ہی کو تھے کہ آقا کی مدد نے

گرداب سے کھینچا ہمیں طوفاں سے نکالا

 

اُمت کے کلیجہ کی خلش تم نے مٹائی

ٹوٹے ہوئے نشتر کو رَگِ جاں سے نکالا

 

ان ہاتھوں کے قربان کہ ان ہاتھوں سے تم نے

خارِ رہِ غم پائے غریباں سے نکالا

 

اَرمان زَدوں کی ہیں تمنائیں بھی پیاری

اَرمان نکالا تو کس اَرماں سے نکالا

 

یہ گردنِ پر نور کا پھیلا ہے اُجالا

یا صبح نے سر اُن کے گریباں سے نکالا

 

گلزارِ براہیم کیا نار کو جس نے

اس نے ہی ہمیں آتش سوزاں سے نکالا

 

دینی تھی جو عالم کے حسینوں کو ملاحت

تھوڑا سا نمک اُن کے نمکداں سے نکالا

 

قرآں کے حواشی پہ جلالین لکھی ہے

مضموں یہ خطِ عارِضِ جاناں سے نکالا

 

قربان ہوا بندگی پر لطف رِہائی

یوں بندہ بنا کر ہمیں زِنداں سے نکالا

 

اے آہ مِرے دل کی لگی اور نہ بجھتی

کیوں تو نے دھواں سینۂ سوزاں سے نکالا

 

 

 



Total Pages: 158

Go To