Book Name:Zoq-e-Naat

خزانِ غم سے رکھنا دور مجھ کواس کے صدقے میں

جو گل اے باغباں ہے عطر تیرے باغ صنعت کا

 

الٰہی بعد مردن پردہ ہائے حائل اُٹھ جائیں

اُجالا میرے مرقد میں ہو اُن کی شمع تربت کا

 

سنا ہے روزِ محشرآپ ہی کا مونہہ تکیں گے سب

یہاں پورا ہوا مطلب دلِ مشتاق رُویت کا

 

وجودِ پاک باعث خلقت مخلوق کا ٹھہرا

تمہاری شانِ وَحدت سے ہوا اِظہار کثرت کا

 

ہمیں بھی یاد رکھنا ساکنانِ کوچۂ جاناں

سلامِ شوق پہنچے بیکسانِ دَشت غربت کا

 

حسنؔ سرکارِ طیبہ کا عجب دَربارِ عالی ہے

درِ دولت پہ اِک میلا لگا ہے اَہل حاجت کا

تصور لطف دیتا ہے دہانِ پاک سرور کا

تصور لطف دیتا ہے دہانِ پاک سروَر کا

بھرا آتا ہے پانی میرے مونہہ میں حوضِ کوثر کا

 

جو کچھ بھی وَصف ہو اُن کے جمالِ ذَرَّہ پروَر کا

مِرے دیوان کا مَطلع ہو مَطلع مہرِ محشر کا

 

مجھے بھی دیکھنا ہے حوصلہ خورشیدِ محشر کا

لئے جاؤں گا چھوٹا سا کوئی ذَرَّہ تِرے دَر کا

 

جو اِک گوشہ چمک جائے تمہارے ذَرَّۂ در کا

ابھی مونہہ دیکھتا رہ جائے آئینہ سکندر کا

 

اگر جلوہ نظر آئے کف پائے منور کا

ذرا سا مونہہ نکل آئے ابھی خورشید محشر کا

 

اگر دَم بھر تصور کیجئے شانِ پیمبر کا

زباں  پر  شور  ہو  بے  ساختہ   اَللّٰہُ  اَکْبَر کا

 

اُجالا طور کا دیکھیں جمالِ جاں فزا دیکھیں

کلیم آکر اُٹھا دیکھیں ذرا پردہ ترے دَر کا

 

 

 



Total Pages: 158

Go To