Book Name:Zoq-e-Naat

سن لے فریادِ حسنؔ فرما دے اِمدادِ حسن

صبح محشر تک رہے آباد تیری اَنجمن

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

ہے ترے اَلطاف کا چرچا جہاں میں چار سو

شہرۂ آفاق ہیں یہ خصلتیں یہ نیک خو

ہے گدا کا حال تجھ پر آشکارا مو بمو

آج کل گھیرے ہوئے ہیں چار جانب سے عدو

روئے رحمت برمتاب اے کام جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

شام ہے نزدیک منزل دُور میں گم کردہ راہ

ہر قدم پر پڑتے ہیں اس دَشت میں خس پوش جاہ

کوئی ساتھی ہے نہ رہبر جس سے حاصل ہو پناہ

اَشک آنکھوں میں قلَق دِل میں لبوں پر آہ آہ

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

تاج والوں کو مبارک تاجِ زَر تخت شہی

بادشاہ لاکھوں ہوئے کس پر پھلی کس کی رہی

میں گدا ٹھہروں ترا میری اسی میں ہے بہی

ظل دامن خاکِ دَر دیہیم و افسر ہے یہی

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

مناقب حضرت شاہ بدیع الدین مدار قُدِّسَ سِرُّہٗ الشَّرِیْف

ہوا ہوں دادِ ستم کو میں حاضرِ دَربار

گواہ ہیں دلِ مخزون و چشمِ دَریا بار

طرح طرح سے ستاتا ہے زُمرۂ اَشرار

بدیع بہرِ خدا حرمت شہِ اَبرار

مدار چشم عنایت ز من دَریغ مدار

نگاہِ لطف و کرم از حسن دریغ مدار

 

ادھر اَقارب عقارب عدو اَجانب خویش

اِ د ھر ہوں جوشِ معاصی کے ہاتھ سے دل ریش

بیان کس سے کروں ہیں جو آفتیں دَر پیش

پھنسا ہے سخت بلاؤں میں یہ عقیدت کیش

مدار چشم عنایت ز من دریغ مدار

 



Total Pages: 158

Go To