Book Name:Zoq-e-Naat

دیکھ کر اس نفس بد خصلت کی یہ زشتیٔ خواص

سوزِ غم سے دِل پگھلتا ہے مرا شکل رِصاص

کس سے مانگوں  خونِ حسرت ہائےکشتہ کاقصاص

مجھ کو اس موذی کے چنگل سے عطا کیجے خلاص

روئے رحمت برمتاب اے کام جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

ایک تو ناخن بدل ہے شدتِ اَفکارِ قرض

اس پر اَعدا نے نشانہ کر لیا ہے مجھ کو فرض

فرض اَدا ہو یا نہ ہو لیکن مرا آزار فرض

رَد نہ فرماؤ خدا کے واسطے سائل کی عرض

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

نفس و شیطاں میں بڑھےہیں  سو طرح کے اِختلاط

ہر قدم دَر پیش ہے مجھ کو طریق پل صراط

بھولی بھولی سی کبھی یاد آتی ہے شکلِ نشاط

پیش بارِ کوہ کاہِ ناتواں کی کیا بساط

روئے رحمت برمتاب اے کام جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

آفتوں میں پھنس گیا ہے بندۂ دَر اَلحفیظ

جان سے سو کاہشوں میں دَم ہے مضطر اَلحفیظ

ایک قلب ناتواں ہے لاکھ نشتر اَلحفیظ

المدد اے داد رَس اے بندہ پروَر اَلحفیظ

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

صبح صادِق کا کنارِ آسماں سے ہے طلوع

ڈَھل چکا ہے صورتِ شب حسن رُخسارِ شموع

طائروں نے آشیانوں میں کئے نغمے شروع

اورنہیں آنکھوں کواب تک خوابِ غفلتسے رُجوع

روئے رحمت برمتاب اے کام جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

بدلیاں چھائیں ہوا بدلی ہوئے شاداب باغ

غنچے چٹکے پھول مہکے بس گیا دِل کا دماغ

آہ اے جورِ قفس دِل ہے کہ محرومی کا داغ

واہ اے لطف صبا گل ہے تمنا کا چراغ

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

 



Total Pages: 158

Go To