Book Name:Zoq-e-Naat

اے مدینے کی ہوا دِل مِرا اَفسردہ ہے

سوکھی کلیوں کو کھلا جاتا ہے جھونکا تیرا

 

میرے آقا ہیں وہ اَبر کرم اے سوزِ اَلم

ایک چھینٹے کا بھی ہوگا نہ یہ دہرا تیرا

 

اب حسنؔ منقبت خواجۂ اَجمیر سنا

طبع پُرجوش ہے رُکتا نہیں خامہ تیرا

                                                                           

منقبت حضرت خواجہ غریب نواز رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ

خواجۂ ہند وہ دَربار ہے اَعلیٰ تیرا

کبھی محروم نہیں مانگنے والا تیرا

 

مَے سر جوش در آغوش ہے شیشہ تیرا

بیخودی چھائے نہ کیوں پی کے پیالہ تیرا

 

خفتگانِ شب غفلت کو جگا دیتا ہے

سالہا سال وہ راتوں کا نہ سونا تیرا

 

ہے تِری ذات عجب بحرِ حقیقت پیارے

کسی تیراک نے پایا نہ کنارا تیرا

 

جورِ پامالیٔ عالم سے اِسے کیا مطلب

خاک میں مل نہیں سکتا کبھی ذرَّہ تیرا

 

کس قدر جوشِ تحیر کے عیاں ہیں آثار

نظر آیا مگر آئینہ کو تلوا تیرا

 

گلشن ہند ہے شاداب کلیجے ٹھنڈے

واہ اے اَبر کرم زور برسنا تیرا

 

کیا مہک ہے کہ مُعَطَّر ہے دماغِ عالم

تختۂ گلشنِ فردوس ہے روضہ تیرا

 

تیرے ذرَّہ پہ مَعاصی کی گھٹا چھائی ہے

اس طرف بھی کبھی اے مہر ہو جلوہ تیرا

 

تجھ میں ہیں تربیتِ خضر کے پیدا آثار

بحر و بر میں ہمیں ملتا ہے سہارا تیرا

 



Total Pages: 158

Go To